کرسچن سائنس جرمنی میں |

کرسچن سائنس جرمنی میں

فرانسس تھربر سیل کی جانب سے

آرپیڈ ڈی پازتھورے کی زندگی کی ایک تصویر

اوریجنل لونگ ائیر کا مجموعہ

میری بیکر ایڈی کا عجائب گھر

پیش لفظ

جرمنی میں کرسچن سائنس کی تعلیمات کو فروغ دینے کی اپنی کوششوں سے متعلق اِس کتاب میں فرانسس تھربر سیل کا اپنا بیان کئی برس تک قارئین کے لئے حواصلہ افزائی کا وسیلہ بنا رہا ہے۔

لونگ ایئر ہسٹوریکل سوسائٹی کی جانب سے جرمنی میں کرسچن سائنس کی اشاعت کی ذمہ داری خصوصاً اِس لئے بھی مناسب ہے کیونکہ جرمنی میں مسز سیل کے مشن میں میری بریچر لونگ ایئر ہی تھیں جو زیادہ ذمہ دار تھیں۔ مسز لونگ ایئر وہ ہی ”خاتون“ ہیں جن کا ذکر تعارف میں کیا گیا ہے۔

اِس کتاب کی اشاعت سے متعلقہ تمام تر جملہ ء حقوق میری ایف باربر کی جانب سے لونگ ایئر فاؤنڈیشن کو سونپے گئے ہیں۔ قریباً دو دہائیوں تک مسز باربر اِس کتاب کی اشاعت وتشہیر کے لئے نہایت پْر جوش تھیں۔

لونگ ایئر ہسٹوریکل سوسائٹی

میری بیکر ایڈی کاعجاب گھر

تعارف

1896میں ایک افریقی خاندان نے پوری دنیا کی سیر کرنے کا آغاز کیا۔انہیں بھیجے گئے الوداعی تحائف میں سے ایک میری بیکر ایڈی کی تحریر کردہ سائنس اور صحت آیات کی کنجی کے ساتھ کی ایک کاپی تھی۔ کافی لمبے سفر کے بعد بیوی اور بچے ڈریسڈن، جرمنی میں سردیوں میں اْس شہر کی موسیقی اور فنون سے لطف اندوز ہونے کے لئے رک گئے۔اِن پرسکون مہینوں میں اْس خاتون نے سائنس اور صحت کا بغور مطالعہ کیا۔ اْسے اِس سے خاص لگاؤ تھا، اور سماجی طور پر جس کسی سے اْس کی ملاقات ہوئی اْس نے اِس زبردست کتاب سے متعلق اور اِس میں پائی جانے والی سچائی سے متعلق اْن سے بات کی۔

1897 میں بہار کے شروع ہوتے ہی وہ نیو یارک کی بندرگاہ پر اْترتے ہوئے وہ امریکہ واپس لوٹ آئے۔اگلے اتوار کی صبح اْنہوں نے سیکنڈ چرچ آف کرائسٹ، سائنٹسٹ، نیو یارک میں عبادت کی، اور اِس عبادت کے اختتام پر خاتون نے پہلی قاری، مسز لورا لیتھروپ کو ڈھونڈا، جو ایک معلمہ بھی تھی، اور اْسے بہت جذبے کے ساتھ اِس کتاب کو حاصل کرنے اور پڑھنے سے متعلق بتایا، اور یہ بتایا کہ اْس نے ڈریسڈن میں بھی لوگوں کو اِس کے بارے میں بتایا اور اْن سے وعدہ کیا تھا کہ جونہی وہ امریکہ پہنچے گی وہ کرسچن سائنس کے تعارف کے لئے کسی کارکن کو بھیجنے اور وہاں بھی ایک چرچ تعمیر کروانے کی کوشش کرے گی۔

ہمارے اپنے شہر نیویارک میں، جو اْس زمانے میں دنیا کا دوسرا بڑا شہر تھا، کرسچن سائنس کے کام کو تعمیر کرنے کے لئے بہت کام کیا گیا تھا، تو کسی کارکن کو باہر بھیجنے کی درخواست پر کم غور کیا جاتا تھا، مگر سچائی کو جرمنی کے لوگوں تک پہنچانے کی خواہش اِس خاتون کے دل میں گہری تھی، اور چند ماہ بعد وہ واپس آئی اور اپنی درخواست دوہرائی۔ اِس مرتبہ اْس کی التجا ہماری معلمہ، مسز لیتھروپ، کے دل کو چھو گئی، جس نے اِن لوگوں تک سچائی پہنچانے کے لئے کسی کو بھیجنے کا وعدہ کیا۔ اگلے دن مسز لیتھروپ نے مجھے بھیجا، یہ کہانی سنائی اور کہا کہ اسے لگتا تھا کہ خدا کی طرف سے ایک بلاوہ تھا، اور اِس کا جواب دینے اور اِس کام کو سر انجام دینے کے لئے مجھے چنا گیا تھا۔

فرانسس تھربر سیل

مئی، 1931۔

پہلا باب

میرے باپ کے اجداد فرانسیسی مسیحی تھے، جو اپنے دور کی پوپ پرستی سے بچنے کے لئے انگلینڈ کی طرف ہجرت کر چکے تھے اور انہوں نے اپنے ضمیر کے فرمان کے مطابق خدا کی عبادت کرنے کے لئے آزادی پا لی تھی۔ وہ خدا کے تاکستان میں مضبوط کارکنان تھے، اور جب کئی نسلوں کے بعد انہیں ایک نئی سر زمین کا پتا چلا جو مکمل مذہبی آزادی فراہم کرتی تھی، تو امریکہ کے اِس خطرناک سفر کو انجام دینے والے اولین زائرین میں سے وہ بھی تھے۔

نیو انگلینڈ میں انہوں نے اپنی زندگی اور قابلیت کو خدا اور انسانیت کی خدمت کے لئے وقف کیا۔ ان کے آدمی مبلغین ، اساتذہ اور معالج تھے۔

میری والدہ کا کنبہ اسکاچ کوئیکرز تھا۔ انہوں نے بھی اپنی زندگی خدا کی خدمت کے لئے وقف کردی۔ میرے والد ٹیکساس اور میکسیکو میں اٹھارہ سال کی عمر میں مشنری بن گئے تھے۔ ان ممالک میں وہ گھوڑے کی سواری پر تبلیغ اور درس و تدریس کے سلسلے میں وسیع علاقوں کا سفر کرتے تھے جہاں بھی جاتے تھے۔ وہ اْن لوگوں کے گھروں میں رہتے تھے جن کے ساتھ وہ کام کرتے تھے، یوں وہ مالک ،یسوع مسیح کی اِن ہدایات کی لفظی فرمانبرداری کرتے تھے’’اور جس گھر میں داخل ہو وہاں پہلے کہو کہ اس گھر کو سلامتی ہو۔ ۔۔۔اُسی گھر میں رہو اور جو کُچھ اُن سے مِلے کھاؤ پِیو۔گھر گھر نہ پھِرو۔‘‘ (لوقا 10 باب 5 تا 7 آیات)۔ اْنہوں نے اپنی زمینی زندگی کے باقی سالوں کے دوران انجیل کی تبلیغ جاری رکھی۔

بچپن سے ہی میں نے اپنی والدہ کو اس بیماری میں مبتلا دیکھا جس کو لاعلاج بیماری کہا جاتا تھا۔ اْن میں اتنی طاقت نہیں تھی کہ وہ اپنے گھر کا کام کاج سنبھال سکتیں۔ کئی سالوں کے مسلسل مصائب کے بعد ، اْنہوں نے آنکھیں بند کیں اور ہمیں چھوڑ گئیں ، اور اْن کے آخری الفاظ خدا کے لئے نہیں تھے، بلکہ اپنے شوہر سے اپنے بچوں کی دیکھ بھال کرنے کی التجاکے تھے۔

میں اس تعلیم کو تسلیم کرنے سے قاصر تھی کہ ایک قادر خدا ہے ، جو اچھا ہے اور جس نے سب کو بنایا ہے ، اس غیر منطقی دلیل کے ساتھ کہ ایک طاقتور شیطان ہے جسے خدا اور انسان کی مشترکہ کوششوں کی ضرورت ہے کہ وہ اس پر قابو پائیں۔

اس تعلیم میں مومنین کے تجربات نے واضح کیا کہ ضرور کہیں غلطی ہوئی ہے۔

زندگی بیماری اور موت کی مستقل تکرار معلوم ہوتی تھی۔ ایک کے بعد ایک خاندان میں سے لے لیا گیا ، آخر کار میں مایوسی ہوگئی۔ میں دلی طور پر جانتی تھی کہ ایک خدا تھا ۔ مجھے یقین نہیں تھا کہ کوئی بھی اس کے بارے میں کچھ بھی جانتا ہے ، لیکن جب سے میں نے عورت کو پہچانا، خدا کو ڈھونڈنے کی آرزو ناقابل تلافی تھی۔ میں نے مختلف چرچوں کے عقائد میں ایسی چیز ڈھونڈنے کی کوشش کی جو بائبل کو کھولے اور انسان کے وجود کی ایک وجہ اْس کی زندگی میں ایک مقصد اور اس قانون کی تکمیل میں اس کی حفاظت کرنے والے قانون کو ظاہر کرے۔ لیکن یہ طلب کرنا بیکار رہا۔

جو کوئی امید کے بغیر اور خدا کے بارے میں کچھ نہیں جانتا وہ صرف ایک مردہ چیز ہے ، حتیٰ کہ انسانی فہم کے مطابق وہ زمین پر چلتا پھرتاہے۔ مستقبل کے وعدے کی بغیر کسی کرن کےزندگی مجھے بالکل بے سود معلوم ہوئی ۔

میں نے ان چیزوں کا بہت کم خواب دیکھا تھا جو خدا نے میرے لئے تیار کی تھیں ، اور وہ میرا انتظار کر رہی تھیں۔ لیکن موسم گرما کی ایک خوبصورت شام جب میں نیویارک شہر کی ایک گلی میں چل رہی تھی ، میں نے ایک عمارت دیکھی جس پر یہ الفاظ مرقوم تھے ، ’’فرسٹ چرچ آف کرائسٹ ۔ سائنٹسٹ ۔‘‘ میں گلی کو پار کرکے اندر چلی گئی گویا مجھے بلایا گیا ہو ۔ یہ ایک گواہیوں کی میٹنگ تھی ، اور وہاں میں نے ایک نیا پیغام سنا ، کہ انسان خدا کی مرضی کی وجہ سے نہیں ، بلکہ خدا سے لاعلمی کی وجہ سے تکلیف اٹھاتا ہے۔ میں نے فوراً دیکھا کہ یہ سچ ہے ، صرف جہالت ہی مصائب کی ایک وجہ ہے ، ایک ایسی چیز جو انسان کو نیکی سے اندھا کر سکتی ہے اور اسکی قابلیت اور طاقت لوٹ سکتی ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ خداایک باپ کے ساتھ ساتھ ایک ماں بھی ہے ، اور میں نے یہ سچ مانا ، اور یہ کہ باپ کی محبت اور ماں کے ادراک کے ساتھ خدا تمام چیزوں کو بہتر بنائے گا اور اپنے بچوں کو دانشمندی اور اپنی مرضی سے عطا کرے گا۔ ایک اور مقرر نے کہا کہ یہ تعلیم زندگی کی سائنس ہے اور خدا کو روح اور مخلوق کو روحانی ؛ اور مادے کو غیر حقیقی حیثیت سے ظاہر کرتی ہے؛ اور یہ سائنس ایک روحانی سوچ رکھنے والی عورت نے دریافت کی تھی جس نے اِسےدنیا کو دے دیا۔

میں اس میٹنگ سے پْر امید، خوشی سے ایک نئی مخلوق بن کر نکلی ، کیوں کہ میں نے دیکھا کہ اگر یہ سچ ہے تو ، دینی یا مذہبی خیالات کی یہ دنیا اوراس میں ہر چیز جھوٹی بنیاد پر مبنی تھی اور اس کا گر جانا ضروری ہے؛ اور میں جانتی تھی کہ اگر یہ سائنس ہوتی تو اسےسیکھا جاسکتا تھا ، اورمیں پْرعزم تھی کہ میں اسے سیکھوں گی ، اور اس طرح خدا کو ڈھونڈوں گی اور زندگی کو سمجھوں گی۔ میں نے استفسار کیا کہ میں اس تدریس کے بارے میں مزید کس طرح جان سکتی ہوں ، تو مجھے ایک شفا دینے والی کی طرف بھی ہدایت دی گئی جو مسز ایڈی کی طالبہ تھیں، مسز لورا لیتھروپ ، سی ایس ڈی جو ایک معلمہ بھی تھیں۔

کئی سالوں سے میں پیٹ کی سنگین بیماری کا شکار تھی ، جس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ موروثی ہے ، اور اوائل بچپن ہی سے میری نظر کمزور ہو رہی تھی۔ طبیبِ چشم اس بات پر متفق تھے کہ چالیس سال کی عمر میں پہنچنے سے پہلے میں مکمل طور پر اندھی ہوجاؤں گی۔

میں اس خاتون ، مسز لیتھروپ کے پاس گئی ، اور اسے اپنی مشکلات سے آگاہ کیا اور کہا کہ میں خدا کے بارے میں جاننا چاہتی ہوں۔ اپنی دوسری ملاقات کے موقع پر ، میں نے اس سے کہا کہ وہ میرے علاج کے لئے وقت ضائع نہ کرے، کیوں کہ میری بیماری لاعلاج تھی اور واقعتاً میں علاج کے لئے نہیں آئی تھی بلکہ یہ سیکھنے کے لئے کہ کرسچن سائنس خدا کے بارے میں کیا تعلیم دیتی ہے ، اور اس تعلیم کی تصدیق کیسے ہوسکتی ہے۔ میں نے پوچھا کہ کیا اسکول ایسے ہیں جہاں یہ سیکھی جاسکتی ہے۔ اس نے کہا کہ یہاں اسکول نہیں بلکہ کلاسز ہوتی ہیں ، اور وہ اگلے مہینے ایک کلاس شروع کرنے والی تھی ، جس میں اگر چاہوں تو میں بھی شامل ہو سکتی تھی۔

اس نے مجھے میری بیکر ایڈی کی لکھی ہوئی ایک چھوٹی سی کتاب ، نہیں اور ہاں ، دی جو میں نے اس شام تین بار پڑھی۔ اس نے تمام سوالوں کے جوابات دیئے کہ آیا یہ تعلیم قابل قبول ہوگی یا نہیں ، کیوں کہ اس نے واضح طور پر ظاہر کیا ہے کہ اچھائی یا برائی ذاتی نہیں ہے ، اور یہ کہ انسان کو خدا سے الگ نہیں کیا جاسکتا۔ اس مطالعہ کے اختتام پر میں نے محسوس کیا کہ جسمانی پریشانی مکمل طور پر ختم ہوچکی ہے۔ وہ کبھی واپس نہیں آئی ، حالانکہ میں نے اس سے آگے بڑھ کر کام کیا ہے جسے کئی سالوں سے انسانی طاقت اور برداشت کہا جاتا ہے۔ جسمانی تندرستی اس تعلیم کی سچائی کی ایک اٹل علامت تھی ، اور اس ثبوت نے اضطراب کو ہمیشہ کے لئے بجھا کر آنے والے شکوک و شبہات کو کھول دیا۔

اس کے بعد میں نے میری بیکر ایڈی کی تحریر کردہ کرسچن سائنس کی درسی کتاب ، سائنس اور صحت آیات کی کنجی کے ساتھ ، خریدی اور ایک ہفتہ بعد مسز لیتھروپ کی پڑھائی جانے والی ایک کلاس میں داخل ہوئی ، جہاں میں بہت سارے جوشیلے اور متاثر کن لیکچروں سے لطف اندوز ہوئی۔ کلاس کے اختتامی سیشن میں ، ہمارے استاد نے اس خواہش کا اظہار کیا کہ ہم میں سے ہر ایک کرسچن سائنس چرچ کا ممبر بن جائے گا۔ کلاس کے دوسرے ممبروں کی طرح میں نے بھی اس درخواست کی تعمیل کی ، حالانکہ میں اس کی وجہ نہیں جانتی تھی ، کیوں کہ میں نے ابھی تک چرچ کے مفہوم سے اور نہ ہی سچائی کے قیام میں اس کی بڑی اہمیت سے واقف تھی ۔ تاہم ، درمیانی برسوں کے دوران ، گھر سے متعلق چرچ آف کرائسٹ ،سائنٹسٹ ، میرا خالص ترین تصور رہا ہے ، اور میں نے یہ سیکھا ہے کہ یہ انسانی شعور میں خدا کی بادشاہی کا اعلی ترین اظہار ہے۔

سردیوں کا یہ پہلا موسم خوش گوار تھا۔ میں نے درسی کتاب ، سائنس اور صحت آیات کی کنجی کے ساتھ ، دن میں کئی گھنٹے اور رات گئے تک پڑھی ، اور چرچ نےخدا اور اس کے مقصد کے لئے کام کرنے کا موقع دیا۔

میں نے مشاہدہ کیا کہ ریڈنگ روم صرف دن کے وقت کھلے ہوتے تھے تو میں نے پتا کروایا کہ کیا وہ شام کو نہیں کھل سکتے ، تاکہ دن میں ملازمت کرنے والے بہت سے لوگوں کو موقع ملے کہ وہ ہستی کی اس سائنس سیکھ سکیں۔ ہمارا ریڈنگ روم فوری طور پر کھولا گیا اور شام کو میری نگرانی میں سونپ دیا گیا ، اور یوں کرسچن سائنس کے مقصد میں بطور کارکن میری سرگرمی شروع ہوگئی۔ اس کام میں بہت سارے خوبصورت تجربات ہوئے ، اور بہت سارے لوگوں نے شام میں اس کمرے میں آکر خدا کو پایا۔

میں نے ایک سال سے کم عرصے میں ہی کرسچن سائنس کو پا لیا تھا۔ میری نا امید زندگی میں الٰہی وعدہ لاتے ہوئے یہ خدا کی طرف سے ایک تحفہ کے طور پر میرے پاس آئی تھی۔ اس نے مجھے ہستی کی ایک وجہ، سرگرمی اور افادیت کا شاندار امکان فراہم کیا۔

میں اس حقیقت کو پسند کرتا تھا اور اِس کے فہم میں بڑھنے اور کرسچن سائنس کے مقصد میں کار آمد ہونے کی امید رکھتا تھا، مگر اِس سائنس کو غیر ملکی سر زمین میں لے جانے اور اِسے قائم کرنے سے متعلق سوچنا ناممکن چیز معلوم ہوئی۔ بہر حال ، میرے استاد نے مجھے یہی کرنے کی ہدایت کی تھی۔

میں نے اسے یاد دلایا کہ میں ابھی تک کرسچن سائنس کے بارے میں کچھ نہیں جانتی ہوں ، اور یہ کہ اور پرانے طلباء بھی تھے جو ہر لحاظ سے بہتر طور پر تیار تھے ، لیکن اس نے اصرار کیا کہ اِس کے لئے ضروری قابلیت میرے پاس ہے۔ میں نے اسے بتایا کہ میں علاج کرنا نہیں جانتی تھی ، لیکن اس نے کہا ، ’’کوئی بات نہیں ، تم میں محبت ہے ، اور اطاعت اور ایمانداری کی خصوصیات ہیں ، اوریہ تمہیں سنبھال لیں گی اور خدا تمہیں دکھائے گا کہ کام کیسے کرنا ہے۔ ‘‘

تب میں نے کہا کہ میں جرمن زبان کا ایک لفظ نہیں جانتی ، اور میرے پاس بیرون ملک جانے اور اجنبی شہر میں رہنے کے لئے پیسے نہیں ہیں۔

اس نے جلدی سے ان اعتراضات کو دور کیا اور مجھے یقین دلایا کہ جرمنی میں ہر شخص انگریزی بولتا ہے۔ بعد میں مجھے معلوم ہوا کہ یہ ایک غلطی تھی ، اور بہت ہی کم لوگ انگریزی جانتے تھے۔ جرمنی جانے کے لئے اور کچھ وقت کے لئے مجھے وہاں گزارا کرنے کےلئے چرچ کے ایک ممبر نے کچھ قرض دیا۔ میں نے اس رقم کو جلد سے جلد سود کے ساتھ واپس کردیا۔ یہ مشکل تھا ، لیکن الہی محبت نے مجھے قائم رکھا۔ میری مادی ضرورتیں کم تھیں ، اور میں کسی مالی ذمہ داری سے آزاد رہنا چاہتی تھی۔

اس وقت تک میں نے کبھی بھی شفا کا کوئی کام نہیں کیا تھا ، لیکن اس کے بعد میرے پاس دو معاملات سامنے آئے جب میں نے اپنے بلاوے کی اطاعت کرنے کا وعدہ کیا ۔ ایک تو وہ جرمن امریکی خاتون تھی جو بارہ سال سے گٹھیا کا شکار تھی۔ اْس نے کہا کہ کئی سال پہلے بارش میں گھنٹوں کھڑے ہوکر پہلے بادشاہ ولہیلم کے جنازے کو دیکھنے کی وجہ سے یہ ہوا تھا۔ وہ صرف ہمارے انٹرویو کے دوران ہی ٹھیک ہوگئی تھی۔ میں نے اس کو شفانہیں دی ، بلکہ اس بیماری سے متعلق عدم کو جانااور جو کہانی اْس نے مجھے سنائی اْس میں اْس کے یقین کو دیکھا ۔ میں اس کیس کے بارے میں اس لئے بتاتی ہوں کیونکہ جرمنی جانے کے بعد میرے پاس گٹھیا کے متعددکیسز آئے ، جن کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ بیک وقت اور اسی طرح اْن کا سامنا کیا گیا تھا ، اور وہ سب ٹھیک ہوگئے تھے۔

دوسرا معاملہ اس عمر رسیدہ خاتون کا تھا جس کے بارے میں کہا جاتا تھا کہ وہ کینسر کی وجہ سے مر رہی تھی۔ مکمل طور پر ہستی کی سچائی کو دیکھنے اور اْس کی آواز سننے کے باعث وہ دو ملاقاتوں میں ہی صحت یاب ہوگئی ۔ میری خوشی کی کوئی انتہا نہ تھی جب وہ ایک ہفتہ بعد جہاز پر مجھے رخصت کرنے آئی۔ ان کیسز نے مجھے ہمت دی ، کیوں کہ میں جانتی تھی کہ مجھ میں ایسا کچھ بھی نہیں تھا جو یہ کام کر سکتا۔ صرف خدا خود ہی یہ خوفناک سائے ختم کرسکتا تھا۔

دوسرا باب

میں دسمبر 1897 کی ایک سہ پہر ہیمبرگ کے لئے نو روزہ اسٹیمر پر نیو یارک سے روانہ ہوئی۔ تاہم ، تیرہویں روز تک ، ہم اپنی منزل تک نہ پہنچے ، جب ہم اْس سمندری طوفان سے دو چار ہوئے جس نے جہاز کو بہت نقصان پہنچایااور ہماری منزل سے کئی میل دور لے گیا۔ یہ اتنا شدید تھا کہ کارگو میں موجود متعدد قیمتی گھوڑے اس قدر زخمی ہوگئے کہ انہیں گولی مار نا پڑی ، حالانکہ ان کو بچانے کے لئے پوری کوشش کی گئی تھی۔

مسافروں کو ان کی حفاظت کے لئےان کی برتھ کے ساتھ تکیوں میں باندھ دیا گیا تھا ، اور انھیں اس طرح باندھا گیا تھا کہ انھیں باہر نہ پھینک دیا جائے ، لیکن اس قدر حفاظت کے باوجود ، متعدد افراد کو ان کی برتھ سے پھینک دیا گیا اور وہ شدید زخمی ہوئے۔ یہ موسم سرما کا وسط تھا جس کی وجہ سے ، صرف چند فرسٹ کلاس مسافر کے علاوہ بیشتر سمندر سے ناواقف اور خوف سے بھرے ہوئے تھے۔ سمندری حدود کا یہ میراپہلا سفر تھا ، لیکن اس پختہ یقین کے ساتھ کہ خدا نے مجھے جرمنی میں اپنا کام کرنے کے لئے بلایا ہے ، اور یہ کہ اس کی موجودگی میرے ساتھ ہے اور مجھے ہر حالت میں قائم اور محفوظ رکھے گا ؛ یہ میرے لئے ایک خوفناک تجربہ ہوتا؛ لیکن کسی بھی وقت میں نے خوف محسوس نہیں کیا، اور ایک منتظم کی مدد سے میں کھانے کے لئے گئی ، اور طوفان کے پرسکون ہونے کے بعد کھانے کی میز پر میں ہی اکیلی مسافر تھی۔ اگرچہ رات کو میری برتھ میں پھنسے ہوئے، میں نے اپنا وقت اپنی کتابیں پڑھ کر اور دعا مانگ کر مسیح کو تلاش کرنےکی کوشش کرتے ہوئے گزارا۔

میرے سفر سے قبل ، مسز ایڈی نے فیلڈ کو ایک نئی کتاب متفرق تحریریں دی تھی ، جو خطوط اور اْن پتوں پر مشتمل تھی جن میں اس کی تعلیمات شامل تھیں ۔ انہوں نے اعلان کیا کہ یہ کتاب ایک سال کے لئے فیلڈ کے لئے واحد استاد ہے ، اور اساتذہ اور طلباء دونوں کو اس کا مطالعہ کرنا چاہئے اور چاہئے کہ وہ اس خط اور کرسچن سائنس کی روح کے بارے میں معلومات حاصل کریں۔ میں نے ’’آسمان سے آنے والی آواز‘‘ کےاِس فرمان کی تعمیل کرتے ہوئےکہ’’لے اسے کھا لے‘‘ (مکاشفہ 10: 9) اس کتاب کو بہت جلد پڑھ لیا۔ وہاں پائی جانے والی سچائیوں اور درسی کتاب نے میری سوچ پر اس قدر روشنی ڈالی کہ اسے خدا کی سلامتی میں طوفان سے اونچا کر دیا ۔

طوفان کے چوتھے دن مجھے سفر کے پہلے دنوں میں اپنے کھانے میز پر موجود ایک ساتھی ، ایک پادری کی اہلیہ کی طرف سے دستخط شدہ نوٹ موصول ہوا ، جس نے پوچھا کہ کیا اس شام کو کئی عورتیں میرے پاس آسکتی ہیں ۔ وہ ایک منتظم کی مدد سے آئیں اور ہم کچھ صوفے پر اورکچھ فرش پر بیٹھ گئیں۔ انہوں نے مجھے بتایا کہ وہ اس لئے آئی تھیں کیونکہ میں جہاز میں وہ واحدشخص تھی جس کوکوئی خوف محسوس نہیں ہوا ، اور وہ چاہتی تھیں کہ میں انھیں بتاؤں کہ یہ جانتے ہوئے کہ جہازکسی بھی لمحے ڈوب سکتا ہے ایسے طوفان کے دوران میں کیسے خوش ہوسکتی ہوں۔ میں نے مسکراتے ہوئے جواب دیا ، ’’جہاز نہیں ڈوبے گا۔‘‘ انہوں نے پوچھا کہ کوئی اتنے یقین سے کیسے کہہ سکتا ہے۔ میں نے انہیں بتایا کہ یہ ایک بہت ہی قیمتی اور مقدس راز ہے لیکن اگر وہ چاہیں تو میں انہیں بتا سکتی ہوں کہ خدا مجھے ایک شاندار مشن پر یورپ بھیج رہا ہے ، اور وہ یقینا مجھے راستے میں غرق نہیں کرے گا۔ ان کی درخواست پر میں نے ان سے قریباً ایک گھنٹہ کرسچن سائنس کے بارے میں بات کی ، انہیں سادہ بنیادی سچائیاں بتاتے ہوئے اور یسوع کی تعلیم پر ان کی توجہ مبذول کروائی اور انہیں ’’ساکت ہو ، تھم جا!‘‘ کے ساتھ اس طوفان پر قابو پانے کی کہانی پڑھ کر سنائی۔ ہم اب مادے سے متعلق نہیں سوچ رہی تھیں بلکہ مسیح کی آواز کو سن رہی تھیں جیسے اْن نے پہلے کہا تھا: ’’خاطر جمع رکھو۔میں ہوں، ڈرو مت!‘‘ (مرقس 6:50)۔ اب وہ خوفزدہ نہیں تھیں۔ سچائی کی روح ان کے دلوں میں داخل ہوگئی تھی؛ اور اچانک ان میں سے ایک نے حیرت سے کہا: ’’اب خاموشی ہے۔ طوفان تھم گیا ہے!‘‘ یہ ختم ہوگیا تھا، اور حیرت کے ساتھ وہ اٹھیں اور خاموشی سے اپنے کیبنوں میں چلی گئیں ۔

دو دن بعد کپتان میرے پاس آئے اور کہا کہ قریباً متفقہ درخواست آئی ہے کہ میں اگلے دن سیلون میں اتوار کی عبادت کروں ۔ میں نے پہلے قاری اور دوسرے قاری کے حصے بھی خود پڑھے کیونکہ جہاز میں کوئی دوسرا کرسچن سائنسدان موجود نہیں تھا۔ صرف دو پادری اور دو معالج ، اپنی اہلیاؤں کے ہمراہ ، موجود تھے۔ سب نے دعا کے لئے میراشکریہ ادا کیا ، اور تین لوگوں نے اْس مکتوب سے متعلق پوچھا جہاں سے میری بیکر ایڈی کی کتاب سائنس اور صحت آیات کی کنجی کے ساتھ دستیاب ہو سکتی تھی۔ کئی سالوں بعد ، میں نے جانا کہ ان خواتین میں سے دو فعال کرسچن سائنسدان بنیں۔

تیسرا باب

ساحلی بندرگاہ سے ڈریسڈن کے سفر کے دوران میں کھانوں کی خریداری کرنے سے قاصر تھی ، کیوں کہ میں جرمن زبان نہیں بول سکتی تھی۔ جمعرات کی دوپہر سے جمعہ کی رات تک میں نے کچھ نہیں کھایا۔ جب بھی ٹرین رکتی تھی تو میں کھانے کی خواہش کا اظہار کرتے ہوئے لوگوں سے بات کرتی تھی ، لیکن کسی کو انگریزی سمجھ نہیں آتی تھی ، اور میں ٹرین نہیں چھوڑ سکتی تھی کہ وہ مجھے لئے بغیر چلی جائے۔

میں جمعہ کی شام کوڈریسڈن پہنچی ، اور ایک انگریزی خاتون مس ایملی کاٹن کے ہاں ایک چھوٹے ہوٹل میں ٹھہری ۔ اس نے مجھے ایک چائے کا کپ اور ایک مکھن والی پتلی بریڈ کاسینڈویچ دیا ، اور میں ایک بھوک سے بھرے سفر کے بعد سونے کے لئے گئی ، لیکن اس کے لئےشکرگزارتھی کہ جس کام کے لئے مجھے محبت نے چنا تھا میں وہاں پہنچ چکی تھی۔

ایک نوجوان امریکی خاتون جو ڈریسڈن میں گانے کی تعلیم حاصل کررہی تھی اور جو اس چھوٹے ہوٹل میں کھانا کھاتی تھی ، اس کے پاس سائنس اور صحت کی ایک کاپی تھی ، اور اسے کسی سے ملنے میں زیادہ دلچسپی تھی جو اسے کرسچن سائنس کے بارے میں مزید کچھ بتاسکے۔ اتوار کی صبح میری آمد کے بعد میں اس کے کمرے میں گئی اور ہم نے اکٹھے سبق پڑھے۔

جب ہم فارغ ہوئیں ، ہم باتیں کرنے بیٹھ گئیں ، اور اس وقت دروازے پر ایک دستک ہوئی اور ایک اور امریکی خاتون نے یہ کہتے ہوئے اندر داخل ہوئی کہ وہ کسی کرسچن سائنسدان کو تلاش کررہی ہے۔ اْس نے بتایا کہ وہ مارک ٹوین کی کزن تھی اور کئی سال قبل اْس سے کرسچن سائنس کی خدمت کے وسیلہ اپنی بیٹی کو تپ دق سے بچانے کی گواہ تھی۔ ایک نوجوان روسی لڑکی ، جو اس کے ساتھ اِس چھوٹے ہوٹل میں رہ رہی تھی اْسے کسی شدید بیماری کی وجہ سے سخت پریشانی کا سامنا کرنا تھا۔ وہ لڑکی ماسکو میں رائل اوپیرا کے لئے تعلیم حاصل کررہی تھی ، اور معالجین نے ابھی اْسے بتایا تھا کہ وہ سال بھر میں یا شاید کبھی بھی نہیں گا سکے گی۔ وہ مایوسی کا شکار تھی ، اور اس مہربان امریکی خاتون نے میزبان سے اْس کی پریشانی کی وجہ پوچھی۔ جب اْسے بتایا گیا کہ بچی کے لئے کوئی انسانی مدد نہیں تھی ، تو اس خاتون کو اس شفا کی یاد آئی جو کرسچن سائنس بہت پہلے اْس کے گھر والوں کے درمیان لائی تھی ، اور وہ امریکی چرچ جاکر ریکٹر سے استفسار کرنے گئی تھی کہ آیا وہاں اْس شہر میں کوئی کرسچن سائنس کا شفا دینے والا ہے۔ اْس نے کہا کہ وہ کسی کو نہیں جانتا ، لیکن یہ کہ ایک نوجوان میوزک کی طالبہ نے اسے بتایا تھا کہ وہ کرسچن سائنس میں دلچسپی رکھتی ہے ، اور اس کا خیال ہے کہ اْس کو پتہ چل جائے گا کہ کیا اس شہر میں کوئی کرسچن سائنسدان موجود ہے۔ اس نے اسے نوجوان خاتون کا پتہ دیا اور وہ ہماری اتوار کی اِس پہلی عبادت کے اختتام پر آئی۔ اس نے اعلان کیا کہ وہ اس بیمار بچی کو شفا بخشنے کے لئے کسی کی تلاش کر رہی ہے ، اور میری میزبان نے فوراً کہا ، ’’یہاں یہ ایسی خاتون ہیں جنہیں خدا نے لوگوں کو شفا بخشنے کے لئے بھیجا ہے۔‘‘

انتظامات کرلئے گئے ، اور پیر کی صبح وہ روسی لڑکی میرے چھوٹے ہوٹل میں آئی۔ چونکہ وہ صرف روسی زبان بولتی تھی اور میں صرف انگریزی جانتی تھی ، اس لئے میں نے اپنی میزبان کو طلب کیا ، جو اس لڑکی سے کافی تفصیل میں بات کرتی تھی۔ پھر حیرت زدہ نظروں سے میری طرف متوجہ ہوکر اْس نے وہی کچھ بتایا جو امریکی خاتون نے مجھے ایک دن پہلے بتایا تھا۔ میں نے اس سے لڑکی کو بیٹھنے کو کہا ، اور میں جرمنی میں اپنی پہلی شفا دینے کو بیٹھ گئی ۔ اس کے بعد میری میزبان چلی گئی۔ میں کرسچن سائنس کی شفاکے طریقہ کار سے متعلق کچھ نہیں جانتی تھی ، لیکن میں نےعقل کے لئے خدا کی طرف رجوع کیا ، اور جیسے ہی میں نے خدا کی قدرت کو دیکھا ، غلطی فوراً میرے خیال سے مٹ گئی۔ میں نے اٹھ کر نوجوان لڑکی کو الوداع کہا۔ وہ پانچ دن تک صبح سویرے آجاتی تھی۔ پانچویں دن اس نے کافی فصیح زبان میں بات کی ، اور میں نے پھر اپنی میزبان کو طلب کیا کہ وہ یہ بتا سکے کہ وہ کیا کہہ رہی ہے۔ نوجوان لڑکی کا کہنا تھا کہ وہ بالکل ٹھیک ہے ، اور وہ پہلی شفا کے بعد سے ایسے ہی تھی ، اور وہ اْسی طرح گا رہی تھی جیسے عام طور پر گاتی تھی۔ جب اْس سے پوچھا گیا کہ اْس نے یہ کیوں نہیں بتایا تو اْس نے کہا کہ اْسے احساس نہیں تھا کہ وہ مجھے بتائیں اور اْ سے یہاں آنے سے خوشی ہوئی۔

اِس کے بعد اْس نے پوچھا کہ کیا وہ دوبارہ ایسٹر پر آسکتی ہیں۔ جب میں نے پوچھا کہ کیوں ، تو اْس نے کہا کہ اْس وقت اْس کا امتحان ہوگا ، اور اگر وہ پاس ہوجاتی ہے تو اْس کے والد اسے اپنی تعلیم مکمل کرنے اور اوپیرا کے لئے تیاری کرنے کی اجازت دیں گے ، لیکن اگر وہ ناکام ہوجاتی ہیں تو اْسے گھر جانا ہوگا اور اْس کے کیریئر کو چھوڑ نا ہوگا۔ میں نے سوچا کہ میں اس کا مطلب سمجھ گئی تھی ، لیکن چاہتی تھی کہ وہ اس کا اظہار کرے ، اور ہمارے مترجم سے کہا ، ’’اس سے پوچھو کہ میرا اِس سب کے ساتھ کیا تعلق ہے۔‘‘ ایک روشن چہرے کے ساتھ اس نوجوان لڑکی نے جواب دیا: ’’خوف کے علاوہ اور کچھ ایسا نہیں جو مجھے میرے امتحانات میں نام کر سکے ، اور مجھے اِس وقت سے کوئی خوف نہیں ہے جب سے اْس خاتون نے خدا سے پہلی بار میرے بارے میں بات کی تھی؛اگر وہ میرے لئے دعا کریں گی تو مجھے کوئی خوف نہیں ہوگا۔‘‘ اسے کرسچن سائنس کے بارے میں کچھ نہیں بتایا گیا تھا؛ صرف ایک طرف بیٹھنے کے علاوہ اْسے کچھ نہیں کہا گیا تھا ماسوائے اِس کے کہ وہ ہر روز اس وقت تک آسکتی ہے جب تک کہ وہ پوری طرح سے شفا یاب نہیں ہوجاتی۔ یقینا، یہ ہماری قائد کے اِس مفہوم کا اظہار تھا جب وہ یہ کہتی ہیں کہ کرسچن سائنسدانوں کو’’شفا‘‘ کے وسیلہ تعلیم دینی چاہئے (متفرق تحریں: 358: 4) کیونکہ اس لڑکی نے سیکھا کہ خدا ہی نے اسے شفا بخشی تھی ، اوریہ کہ ’’کامل محبت خوف کو دور کرتی ہے۔‘‘

اس واقعے کے سلسلے میں ایک قابل ذکر بات یہ تھی کہ میری میزبان مس کاٹن روس میں پیدا ہوئی تھی اور اپنی زندگی کے پہلے پچیس سال وہاں مقیم تھی۔ وہ واحد انگریزی خاتون تھیں جن سے میں نے یورپ میں ملاقات کی جو روسی زبان کو جانتی تھی۔ یہ اس کی مادری زبان تھی ، حالانکہ وہ ایک انگریزی شہری تھی۔ جب یہ لڑکی میرے پاس آئی تو میں اس کے گھر میں مہمان بنوں ، یہ خدائی ہدایت کا مثبت ثبوت تھا۔ لڑکی کا نام فیلیسیتا تھا ، جس کا مطلب ہے ’’خوشی‘‘۔یہ خوش آئند بات تھی۔

چونکہ یہ چھوٹا ہوٹل بنیادی طور پر نوجوان لڑکیوں ، طلباء کے لئے تھا ، لہذا میں جلد ہی ایک اور جگہ چلی گئی جو میرا مستقل گھر تھا ۔ اس چھوٹے ہوٹل میں اٹھارہ مہمان تھے ، جن میں زیادہ تر امریکی تھے۔ میزبان نے انہیں بتایا کہ میں ایک کرسچن سائنسدان ہوں۔ اس وقت کرسچن سائنس بہت کم جانا جاتا تھا ، اور شاید وہاں کے امریکیوں نے سوچا تھا کہ میں عجیب ہوں ، کیوں کہ انہوں نے مجھے نظرانداز کیا ، اور مجھے پوری طرح انسانی صحبت کے بغیر چھوڑ دیا۔ یہاں تنہا ئی تھی اور میں گھریلو پن کا شکار تھی۔ میں نے دن کے وقت بہت اچھے کام کئے ، کیونکہ میں نے اپنی کتابوں کا مطالعہ کیا اور خدا کے ماحول میں رہتی تھی ، لیکن رات کے وقت تنہائی مجھے نیند سے بیدار کرتی تھی ، اور کئی بار میں ایک ہاتھ میں موم بتی کے ساتھ زمین پر چلتی تھی اور سائنس اور صحت میرے دوسرے ہاتھ میں ہوتی،اور اونچی آواز میں پڑھ رہی ہوتی حالانکہ میری آواز سسکوں سے دب جاتی تھی۔ میری سب سے بڑی خواہش مسیح کو تلاش کرنا تھا ، کیونکہ ابھی تک مسیح کے بارے میں میرا تصور بہت مدھم تھا ، لہذا میں نے دعا کے ساتھ مسیح کوتلاش کرتے ہوئے مسز ایڈی کی تحریروں اور نئے عہد نامہ کا مطالعہ دن میں بارہ یا چودہ گھنٹے میں کیا ۔

چونکہ میں پورے یورپ میں کسی کو نہیں جانتی تھی ، اور امریکہ میں صرف چند ہی لوگوں کو معلوم تھا کہ میں وہاں ہوں ، سوال یہ تھا کہ خدا نے مجھے جو کام کرنے کے لئے بھیجا ہے وہ مجھے کیسے ملے گا۔ لیکن جب یہ سوال میرےذہن میںآیا تو اس کا جواب بھی ایسے ہی آیا جیسے مالک نے دیا تھا: ’’کھیت سفید ہیں‘‘؛فصل تیار ہے اور میں بھی تیار ہوں۔ خدا مجھے اپنا کام انجام دینے کے لئے یہاں لایا ہے ، اور غلطی اْن لوگوں کو مجھ تک پہنچنے سے نہیں روک سکتی جنہیں میری ضرورت ہے۔ وہ مجھے ڈھونڈیں گے ، اور خدا مجھے عقل عطا کرے گا جس کی مدد سے میں اْن کو شفا دوں گی۔

کچھ عرصے بعد ایپسکوپل چرچ کے ریکٹر نے شام نو بجے ایک نوکر میرے لئے بھیجا۔ میں اس کے پاس گئی اور اس نے مجھے بتایا کہ وہ گردوں کی بیماری میں مبتلا ہے؛ اور اس سے پہلے بھی اس کے گردوں پر دو شدید دورے پڑچکے ہیں ، اور معالجین نے اسے متنبہ کیا تھا کہ تیسرا دورہ مہلک ہوگا۔ اس نے سائنس اور صحت کو پڑھا تھا ، اور یہ سن کر کہ ایک کرسچن سائنس دان شہر میں ہے اْس نے اْسے ملنے کا ارادہ کیا یہ جاننے کے لئے کہ کرسچن سائنس اس کی ضرورت کو پورا کرے گی ۔ اْس نے مجھ سے ہر بار شام نو بجے اس سے ملنے کو کہا ، کیوں کہ وہ اپنے حواریوں کو یہ جاننے کا متحمل نہیں ہوسکتا تھا کہ وہ مدد کے لئے اس وسیلے کا رخ کرچکا ہے۔ وہ پندرہ دن سے بھی کم عرصے میں ٹھیک ہو گیا تھا ، اور بہت خوش ہوا تھا ، لیکن اس میں ہمت نہیں تھی کہ وہ کھلے طور پر اعتراف کرے ، لہذا اْس نے خاموشی سے مطالعہ کیا اور اپنے چرچ کے کام کو جاری رکھا ۔

تین مہینوں کی پوری جدجہد کے بعد مجھے مسیح مل گیا ، جیسا کہ مسز ایڈی نے انکشاف کیا تھا۔ سردیوں کی ایک سرمئی دوپہر کو میں اپنی بائبل کا مطالعہ کرنے کو بیٹھی اور پھر اپنے قائد کی متفرق تحریروں کی طرف رجوع کرتے ہوئے اْس کے یہ الفاظ یاد کئے ، ’’یہ شمارہ قارئین کے لئے ایک گرافک گائیڈ بک ہوسکتا ہے ، جو راہ کی طرف اشارہ کرتا ہے ، غیب سے ملنے والا ، اور اسےسائنس کے دشوار راستوں پر چلنے کے قابل بنانے والا ہے‘‘ (متفرق تحریریں،6:11۔17) ۔ کچھ دیر پڑھنے کے بعد میں نے کھڑکی کے پاس جاکر بارش سے بھرے باغ کو دیکھا ، یسوع کے الفاظ پر غور کیا ، ’’میں اس لئے آیاکہ وہ زندگی پائیں اور کثرت سے پائیں۔‘‘ اوروہاں مجھ پر ایک روشنی چمکی جیسی روشنی یسوع ظاہر کرنے کو آیا تھا، یعنی ہستی کی سچائی، خدا ، زندگی کے ساتھ انسان کی واحدانیت۔میں نے پہلی بار مسز ایڈی کے اِس بیان کے مفہوم کو سمجھا کہ،’’انسان خدا کے ہونے کا اظہار ہے‘‘ (سائنس اور صحت، 470: 23)،اور یہ کہ یہ سچائی عالمگیر نجات دہندہ ہے، اور اِس کے حضور غلطی کی ہر صورت غائب ہو جانی چاہئے جیسے کہ اندھیرا روشنی کے سامنے غائب ہو جاتا ہے۔

اْس وقت سے راہ کھل گئی۔ چاروں اطراف سے لوگ مدد مانگنے کو آئے۔ چند جرمن لوگ روسی گلوگارہ کے وسیلہ آئے، پھر ناروے کے اْس پادری کے وسیلہ آئے، جس نے کرسچن سائنس سے متعلق ایک دوست کےذریعے جانا جو جہاز کا کپتان تھا اور امریکہ کا سفر کر رہا تھا۔ یہ پادری بیماری تھا اور کئی سال تک اپنے کام کر جاری نہیں رکھ پا رہا تھا۔ معالجین اْس کو صحت یاب نہیں کر پائے تھے۔ اْس کے سمندر پار دوست نے کرسچن سائنس اور اِس کے شفائیہ کام سے متعلق اپنے اْس رشتہ دار سے سن رکھا تھا جو امریکہ میں مقیم تھا۔ اْس نے اْن سے پوچھا کہ کوئی شفا دینے والا کہاں دستیاب ہوگا، اور پھراْسے ڈریسڈن میں میری موجودگی کا پتا چلا۔ نوجوان پادری نے مجھے بتایا کہ وہ سب سے پہلے اس بات کا یقین کرنا چاہتا تھا کہ آیا کہ یہ مسیح کی تعلیم اور شفا ہی ہے؛ اگر اْسے لگا کہ ہاں ہے یہ، تو ناروے میں اْس کے چھ دوست اْسکی پیروی کریں گے، کیونکہ اْنہیں مدد کی اشد ضرورت تھی، لیکن وہ اْنہیں اْس وقت نہیں بلائے گا جب تک وہ پْر یقین نہ ہو جائے کہ یہ مسیح کی تعلیم ہے۔ اْس کے ساتھ کام کرنا ایک نہایت خوبصورت تجربہ تھا، کیونکہ وہ کلام کے حوالہ جات سے واقف تھا اور انہیں پسند کرتا تھا، اور مسیح سے محبت رکھتا تھا۔ اْس نے متعدد دانشمندانہ سوالات پوچھے۔ اِس سے مَیں لگاتار مالک اور ہماری قائدہ کی تعلیمات کی جانب راغب ہوا۔ جلد ہی وہ مطمین ہو گیا اور اْس نے اپنے دوستوں کو بھی بھیجا۔

وہ مختلف چھوٹے ہوٹلوں میں ٹھہرے اور اپنے ساتھ والوں کو بتایا کہ وہ کیوں آئے تھے، تو اْن کے کیسز کو بیشمار لوگ نہایت دلچسپی سے دیکھنے لگے۔ سب نے شفا پائی اور اِس سے ڈریسڈن میں کرسچن سائنس کی شفائیہ قوت کی راہ کھل گئی۔بہت سے لوگ جنوب سے آنے والے لوگوں کی گواہیوں کے وسیلہ آئے۔باقی دور دراز علاقوں سے آئے، کوئی اٹلی سے آیا تو کوئی پرسیہ سے ۔ وہ اِس لئے آئے کیونکہ اْنہیں نے سنا تھا کہ ڈریسڈن میں کوئی امریکی خاتون آئی ہے جو ویسے ہی شفا دیتی ہے جیسے مسیح دیتا تھا۔ایسی افواہوں کا تعاقب کرنا قریباً ناممکن تھا؛ لیکن جب ضرورت زیادہ تھی، تو کلام پیش کیا گیا، اور حاصل کرنے والوں نے دوراً عمل کیا اور مسیح کی شفا کو جانا۔

ایک انگریزی خاتون ، جس نے پینشن کنیز میں میرے کمرے میں رکھی ہوئی عبادات میں شرکت کی جہاں میں رہتا تھا ، اور جو کرسچن سائنس کی ایک پُرجوش طالب علم بن چکی تھی ، نے مجھے اس کی پنشن میں آنے اور رہنے کی دعوت دی جہاں مجھے زیادہ کمرے اور زیادہ آزادی مل سکتی ہے۔ اس نے عبادات کے لئے اپنے ڈرائنگ روم کی پیش کش کی اور مجھے ایک بیٹھک اور سونے کا کمرہ دیا جس کی قیمت میں ایک کمرے کے لئے ادا کر رہا تھا۔ میں نے اس کی پیش کش قبول کرلی اور 1898 کے موسم بہار کے شروع میں ہی چلا گیا۔ میرے بیٹھنے کا کمرہ مسز ایڈی کی تمام کتابوں اور بائبل سے لگا تھا ، اور کرسچن سائنس جرنل اور کرسچن ہفتہ ہفتہ کی موجودہ تعداد ہمیشہ موجود تھی۔ مؤخر الذکر ابھی شروع ہوا تھا اور بعد میں کرسچن سائنس سینٹینل بن گیا۔ یہ کمرہ یورپ میں پہلا کرسچن سائنس پڑھنے کا کمرہ بن گیا۔

نوجوان پادری ہیر برون کی گواہی کے ذریعہ ، مجھے کینسر کے معاملے کو ٹھیک کرنے کے لئے کچھ ماہ بعد ناروے بلایا گیا۔ دو انگریز خواتین جو میرے ساتھ کرسچن سائنس کی طالبہ بن گئیں تھیں۔ عام حالات میں یہ دو دن کا سفر تھا ، لیکن گھنے دھند کی وجہ سے اس بار اس کے لئے پانچ دن درکار تھے۔

مریض ، ایک خاتون ، کو اسپتال لے جایا گیا تھا جہاں ڈاکٹروں نے اس معاملے کو آپریشن کے لئے بہت دور جانا پڑا ، کیونکہ بچہ دانی تقریبا. مکمل طور پر تباہ ہوچکی تھی۔ ناروے کے ایک چھوٹے سے ماہی گیری گاؤں (ہاگسنڈ) کے چار دیگر افراد نے "مسیح صحتیاب" کے آنے کی خبر سن کر پوچھا کہ شاید وہ بھی اس خدمت میں حاضر ہوں۔ چاروں افراد اس گاؤں میں میرے پانچ دن قیام کے دوران صحتیاب ہوئے ، لیکن میں نے دو ماہ تک کینسر کے معاملے پر کام جاری رکھا۔ نتیجہ مکمل طور پر شفا بخش تھا ، اگرچہ اس دوران میں امریکہ چلا گیا۔ لیکن خدا کا کلام برائی سے فنا کا ایک قانون ہے چاہے وہ دور ہو یا قریب۔ یہ شفا یابی پوری طرح دو سال بعد ثابت ہوئی جب سابق مریض نے بیٹے کو جنم دیا۔ نہ وہ اور نہ ہی اس کے کنبے کے کسی فرد کو انگریزی یا کوئی زبان ناروے کے سوا کوئی لفظ معلوم تھا ، لہذا وہ درسی کتاب نہیں پڑھ سکتے تھے اور نہ ہی کرسچن سائنس کا کلام سن سکتے تھے۔

اس گاؤں میں میرے تمام تجربے کا سب سے مقدس واقعہ پیش آیا۔ میں اپنے دو سفری ساتھیوں کے ساتھ ، نوجوان پادری ہیر برون اور اس کے بھائی ، جو ایک پھول فروش تھا ، کے گھر پر کھانے کے لئے گیا تھا۔ کھانے کے اختتام پر ، چھوٹے سے کمرے میں واپس آنے پر ، ہم نے چار دیواری کے ارد گرد پرجوش لوگوں کا ایک گروہ پایا۔ اس گروپ میں صرف وہی لوگ تھے جو بالکل انگریزی جانتے تھے وہ میرے میزبان اور ایک ایسی خاتون تھیں جو اپنی جوانی میں ہی اسکولوں میں انگریزی پڑھاتی تھیں۔ میں نے اس کے ساتھ ان کے پہاڑوں کی عظمت کے بارے میں بات کرتے ہوئے گفتگو شروع کی ، اور کہا کہ انہیں یقینا ایسے خوبصورت ملک میں خوش کن لوگ ہونا چاہئے۔ اس نے جواب دیا کہ وہ بہت ہی خستہ حال لوگ ہیں۔ تب میں نے کہا کہ میں دیکھ سکتا ہوں کہ یہ ہوسکتا ہے ، کیونکہ پہاڑ بہت اونچا تھا ، سورج کی روشنی کو بند کرکے گرمی میں بھی زیادہ تر وقت سائے میں رہتا تھا اور ان کی لمبی ، تاریک سردیوں میں اس میں اضافہ ہوجاتا تھا۔ اس نے جواب دیا: "نہیں ، ایسا نہیں ہے۔ یہ ہمارا خدا ہے جو ہمیں پرہیزگاری بنا دیتا ہے ، ہمارا خدا جس کی لعنت امید اور خوشی کی سورج کی روشنی کو دور کرتی ہے اور اپنے لوگوں پر مصائب اور بیماری بھیجتی ہے۔ میں نے فورا. جواب دیا: "اوہ ، نہیں ، ایسا کوئی خدا نہیں ہے۔ خدا صرف بھلائی اور خوشی اور برکت بھیجتا ہے۔

میں نے خدا کے بارے میں بات جاری رکھی جیسا کہ کرسچن سائنس میں نازل ہوا ، اور بتایا کہ ہم نے صحت اور زندگی میں کیسے اس کا مظاہرہ کیا - مسیح یسوع کے ذریعہ وافر زندگی۔ ماسٹر کے الفاظ ، جیسا کہ لیوک نے ریکارڈ کیا ہے ، شمال کے شمال میں واقع اس چھوٹے سے پھولوں والے کمرے میں اس موسم خزاں کی شام میں پوری طرح سے ثابت ہو گیا تھا: ’’فکر نہ کرنا کہ ہم کس طرح یا کیا جواب دیں یا کیا کہیں۔ کیونکہ روح القدس اْسی گھڑی تمہیں سکھا دے گا کہ کیا کہنا چاہئے۔‘‘(لوقا 12: 11۔12)۔ میں نے وہاں ایسی سچائیاں کہی تھیں جو مجھے پہلے کبھی نہیں معلوم تھیں۔

کچھ دیر کے بعد میری توجہ ایک ایسے شخص کی طرف متوجہ ہوئی جس کا ذہین ایک بہت ذہین چہرہ ہے جس کو ایسا لگتا تھا جیسے وہ بولنا چاہتا ہے۔ میں نے اپنے میزبان سے پوچھا کہ کیا یہ شریف آدمی کچھ پوچھنا چاہتا ہے ، اور اس نے جواب دیا ، ’’اسے انگریزی نہیں آتی ہے۔‘‘ میں نے درخواست کی کہ وہ اس سے پوچھیں کہ وہ کیا کہنا چاہتا ہے۔ اس نے ایسا ہی کیا ، اور پھر ان کے مابین متحرک گفتگو کا آغاز کیا ، تین یا چار دیگر شریک ہوئے۔ حیرت کی نگاہ سے ہمارے نوجوان میزبان نے کہا: "لیکن وہ آپ کو سمجھ گئے ہیں۔ وہ انگریزی کا ایک لفظ نہیں جانتے ، اور پھر بھی وہ سمجھ گئے کہ آپ نے خدا کے بارے میں کیا کہا ہے۔ سب گلاب ہوگئے اور جھکے ہوئے سروں کے ساتھ کھڑے ہو گئے ، اور میرے انگریزی ساتھیوں میں سے ایک مس بینٹینک بیچ نے عقیدت سے کہا ، ’’کیونکہ ہر کسی کو یہی سنائی دیتا تھا کہ وہ میری ہی بولی بول رہے ہیں۔‘‘ (اعمال 2: 6)۔

یہ ایک شاندار لمحہ تھا ، اور تیس سال سے زیادہ وقفے کے بعد بھی میں خوف کے احساس ، مسیح کی موجودگی کے احساس کے بغیر اس کے بارے میں نہیں سوچ سکتا۔

یہ ہفتے کی شام تھی اور اگلی صبح میں ہیر برون کے ساتھ ایک چھوٹے سے گاؤں والے چرچ ، لوتھرن کا چرچ گیا۔ جب ہم قریب پہنچے تو ، ان افراد نے گرجا گھر کی طرف جانے والے سرجری میں کٹے ہوئے قدموں کی لکیریں کھڑی کیں اور جھکے ہوئے سروں کے ساتھ کھڑے ہو گئے ، اور وہائٹ ہائر پادری دروازے پر ہماری منتقلی کا انتظار کرنے لگے ، اور میرے تخرکشک سے کہا ، ’’براہ کرم مسیحی کے معالجے سے کہو کہ میرا بیوی ان لوگوں میں سے ایک تھی جنہوں نے کل رات خدا کے بارے میں جو کچھ سنا اس نے آکر مجھے بتایا ، اور ہم تب سے بیدار ہو رہے ہیں ، اس عظیم نعمت کی بات کرتے ہوئے ، کہ مسیح ان لوگوں کو شفا بخشنے اور انھیں تسلی دینے کے لئے دوبارہ آیا ہے۔ ‘‘

اس کے بعد ہم ڈریسڈن واپس آئے ، جہاں متعدد ایسے افراد تھے جو ٹھیک ہوگئے تھے۔ ڈریسڈن میں پہلی ملاقاتیں جنوری ، 1898 میں ہوئی تھیں ، اور ستمبر میں ہم نے جرمن زبان میں اتوار اور ہفتے کے دن عبادات کا آغاز کیا۔ جو صحتیاب ہو چکے تھے وہ باقاعدگی سے آئے تھے۔ ان میں سے بیشتر انگریزی جانتے تھے اور انہوں نے درسی کتاب ، سائنس اینڈ ہیلتھ کو کلیدی الفاظ کے ساتھ مطالعہ کرنا شروع کیا۔ اس گروہ میں ایک عورت تھی جو کوڑھی سے شفا بخش تھی۔ ایک اور ، چھیاسٹھ سال کی عورت ، پیٹ کے السر اور ملحدیت سے شفا بخش تھی۔ مؤخر الذکر معالجہ جسمانی تندرستی سے اتفاق تھا۔ ایک لمحے میں اس کی ایک الہامی وجہ سے زندگی بھر انکار اسی حتمی اور فطری کے ساتھ غائب ہو گیا جیسے صبح کے سورج کی روشنی سے رات کے سائے ختم ہوجاتے ہیں ، اور اس تبدیلی کے ساتھ ہی جسمانی بیماری ختم ہوگئ۔ ہر ایک چھوٹے سے گروہ کو کسی نہ کسی جسمانی تکلیف سے شفا مل گئی تھی ، اور انہوں نے خلوص اور خوشی سے سائنس کے وجود کی تفہیم کی کوشش کی ، جس کی انہیں تعلیم دی گئی تھی وہ مسیح کے آنے کی ایک طویل انتظار کی امید تھی۔

ایک دن ایک امریکی خاتون نے کرسچن سائنس کے موضوع پر گفتگو کرنے کے لئے فون کیا۔ وہ ایک خود کامل اخلاقیات کی ایک بہترین قسم تھی۔ انہوں نے کہا کہ وہ پادریوں کی ایک لمبی قطار میں سے ہیں ، کہ ان کے قریبی خاندان میں ان کے 6 مبلغین موجود ہیں۔ اس نے سنا تھا کہ میں جو تبلیغ کر رہا تھا اور کیا کر رہا ہوں ، اور مجھے یہ بتانے آیا تھا کہ یہ غلط ہے اور کسی مسیحی برادری میں برداشت نہیں کیا جائے۔ میں نے اسے خاموشی سے سنا ، اور پھر اسے بتایا کہ مجھ کو ہمارے نجات دہندہ ، مسیح یسوع کا اختیار حاصل ہے اور مجھے اپنا کام جاری رکھنا چاہئے۔ اس کے بعد وہ ایک اور امریکی خاتون کے پاس گئیں جو ایک پرجوش مسیحٰ اور چرچ کی خاتون تھیں ، اور اس سے التجا کی کہ اگلی اتوار کی صبح اس کی خدمت میں حاضر ہوں ، جو کچھ کہا گیا تھا اسے سنیں اور پھر مجھ سے مقابلہ کریں ، میرے راستے کی غلطی ظاہر کرتے ہوئے اور ثابت یہ کام جاری رکھنا غلط تھا۔ وہ آئے اور خدمت کے اختتام پر ، جس میں کرسچن سائنس سہ ماہی اسباق پڑھا گیا ، یہ دوسری خاتون اپنے گالوں سے آنسو بہاتے ہوئے آگے آئیں ، اور کہا: "کیا تم میرے لڑکے کو شفا بخش سکتے ہو؟ کیا مسیح آپ کو میرے پیارے بیٹے کو شفا بخشنے کے لئے فضل کرے گا؟ وہ ہپ کے تپ دق میں مبتلا اسپتال میں ہیں۔ معالجین نے اسے کولہے کو دور ہونے سے روکنے کے لئے نیچے اتارا ہے ، لیکن ان کا کہنا ہے کہ وہ کبھی بھی شفا بخش نہیں ہوسکتا ، اور اگرچہ میں بچپن سے ہی ایک مسیحی رہا ہوں ، میں نے کبھی نہیں جانا تھا کہ مسیح اب بھی شفا بخشتا ہے۔ میں نے سوچا کہ مصلوب ہونے سے شفا ختم ہوگئی ہے۔

اس نے کہا کہ اگر میں ان کے پاس آؤں تو وہ اسے اسپتال سے شہر کے اوپر کی پہاڑیوں کی ایک جگہ لے جائے گی۔ میں نے اس سے کہا کہ میں خوشی سے ایسا کروں گا۔

لڑکا کئی مہینوں سے کھڑا نہیں ہوسکا تھا ، اور اس کی ٹانگ ہپ سے نیچے سے پلاسٹر کاسٹ میں تھی۔ ایک نرس انھیں ملک لے گئی اور والدہ کی درخواست پر پلاسٹر کاسٹ ہٹا دیا۔ اس کے جانے کے بعد ، والدہ نے پٹے اور وزن اتارے جو ٹانگ کو بڑھا کر رکھتے تھے۔ میں پیر کی دوپہر ان کے ساتھ شامل ہوا ، اور بدھ کے روز وہ باغ میں چلتا رہا۔ ہر دن اس نے اپنی سیر کا فاصلہ بڑھایا۔

اس ہفتے کے ہفتہ کو میں اتوار کی عبادات انجام دینے کے لئے شہر واپس آیا۔ اتوار کی صبح وہ عورت جو عبادات ختم کرنے کے ایک ہفتہ پہلے وہاں پہنچی تھی ، دوبارہ اس میں شریک ہوئی ، اس بار اپنے بیٹے کے ساتھ ، جو ایک چھوٹی چھڑی کی مدد سے چلتی تھی۔ اگلے ہفتے کے دوران ، انہوں نے آرٹ گیلریوں اور پارکوں کا دورہ کیا ، اور اس وقت کے آخر میں وہ گھر کے لئے روانہ ہوئے۔ انہوں نے مجھے جہاز سے اس کا کین بھیج دیا ، کیوں کہ اس کا علاج اب مکمل ہوچکا ہے۔ ’’بیشک انسان کا غضب تیری ستائش کا باعث ہوگا۔‘‘ (زبور 76: 10)۔

اور یوں کام جاری رہا ، خدا کا کلام طاقت کے ساتھ لوگوں میں نکلتا رہا اور روشنی پھیلاتا تھا جیسے صبح کا سورج ہوتا ہے۔

میں ایک سال انگریزی خاتون کے گھر رہا۔ پال کے تجربے سے کچھ یکساں تھا ، کیوں کہ وہ انگلینڈ کے ایک عظیم گھرانے میں سے ایک ممبر تھی ، اس کی والدہ پورٹلینڈ کے ڈیوک کی بیٹی تھیں ، جبکہ اس کے پھوپھے ماموں چیک کی حیثیت سے چانسلر تھے۔

ابتدائی موسم گرما میں میری ملاقات ناروے کے سمندری کپتان کی اہلیہ نے کی جس نے اس نوجوان پادری کو علاج کے لئے بھیجا تھا۔ وہ مجھے ان کے ساتھ جہاز پر مہمان کی حیثیت سے امریکہ جانے کے لئے مدعو کرنے آئیں ، ان کی پہلی تکلیف دہ داخلی پریشانی کے افسر کو ٹھیک کرنے کے لئے جو ان کے معالج نے کہا تھا کہ سرجیکل آپریشن کی ضرورت ہوگی۔ اس نے کہا کہ اس جہاز پر اس کا اس کا چھٹا سال تھا اور مندرجہ ذیل اس کا سببیٹیکل سال ہوگا ، اور یہ کہ وہ اور اس کا چھوٹا کنبہ گھر میں مل کر ایک سال کے منتظر ہیں۔ تاہم ، اگر اب اسے کسی اسپتال جانا پڑتا ہے تو ، وہ یہ سبیٹیکل سال ضائع ہوجائے گا ، اور چونکہ وہ کسی آپریشن سے بہت زیادہ خوفزدہ تھا ، انہیں خدشہ تھا کہ وہ اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے گا۔ انہوں نے کہا کہ وہ اور ان کے شوہر بھی چاہتے ہیں کہ میں انہیں درسی کتاب کو سمجھنے کے لئے تعلیم دوں ، اور اپنے اور انسانیت کے مفاد کے لئے کرسچن سائنس کا استعمال کروں۔

یہ ایک تجارتی جہاز تھا ، اور وہ سامان لے کر نیویارک جانا تھا ، جہاں وہ دو یا تین ہفتوں تک رہیں گے ، اور پھر جرمنی واپس آئیں گے۔ اس سے مجھے اپنے دوستوں کو دیکھنے اور مدر چرچ جانے اور پھر اپنے کام میں جلدی واپس آنے کا وقت ملے گا۔ اور چونکہ یہاں دو خواتین تھیں جو عبادات انجام دے سکتی تھیں ، اور جیسا کہ مدر چرچ کے دورے سے حاصل کیا جانا بہت اچھا لگتا تھا ، اور میرے اس استاد سے جن کے ساتھ میں کام کے مختلف مراحل پر بات کرنا چاہتا تھا ، میں نے قبول کیا دعوت نامہ۔

ہم ناروے سے واپسی کے فورا. بعد ، اکتوبر کے اوائل میں ہمبرگ سے روانہ ہوئے۔ اس سفر میں پندرہ دن لگے ، اور جب میں ایک صبح سویرے بیدار ہوا تو مجھے جہاز ایک خوبصورت بندرگاہ میں ملا ، لیکن یہ نیویارک نہیں تھا۔ اس کے بعد کپتان نے مجھے اطلاع دی کہ ہم جرمنی سے سفر کرنے کے بعد ، انہوں نے اپنے جہاز رانی کے احکامات کھول دیئے اور معلوم کیا کہ ہم نووا اسکاٹیا میں واقع بندرگاہ ہیلی فیکس کے پابند ہیں ، اور اتاریے کے بعد وہ جہاز کو جنوبی بندرگاہ لے جانے والا تھا بہت زیادہ مہینوں سے یورپ واپس نہیں آئے گا۔ سفر کے دوران اس نے مجھے اس کے بارے میں نہیں بتایا تھا ، کیوں کہ مجھے واپس آنے میں بہت دیر ہوچکی ہے اور اسے خدشہ ہے کہ اس سے مجھے تکلیف ہوگی۔ اس نے کہا کہ جس خدا کی میں نے پوجا کی تھی اس سے کچھ اچھی چیز نکلے گی۔ مجھے اس میں کوئی شک نہیں تھا ، اور خدا کے بارے میں ان کے نئے پائے جانے والے علم میں انہیں خوشی ہوئی ، اور اپنے افسر کی صحتیابی پر خوشی ہوئی ، جس نے بھی حقیقت کو دیکھا اور اسے اپنے پیاروں کے پاس گھر پہنچایا۔

یہ نیویارک کا ٹرین کے ذریعے چوبیس گھنٹے کا سفر تھا ، میں اتوار کی صبح اپنے گھر کے گرجا گھر میں خدمت کے لئے حاضر ہوا۔ خدمت کے فورا بعد ہی میں نے اپنے استاد کی تلاش کی اور اس سے کہا کہ مجھے نہیں معلوم کہ خدا نے مجھے وہاں کیا لایا ہے ، لیکن جہاز واپس نہیں آرہا ہے ، لہذا اس کے پاس میرے پاس کچھ کرنا ہوگا۔ جب میں نے حالات کی وضاحت کی تو اس نے مجھے بتایا کہ وہ مسز ایڈی کے کالج سے گذرنے کے لئے مجھے وہاں لایا ہے۔

میٹا فزیکل کالج بہت سال پہلے ہی بند ہوچکا تھا ، اور میں نے یہ نہیں سنا تھا کہ مسز ایڈی نے اسے دوبارہ کھولا تھا اور اس کے کام کا چارج سنبھالنے کے لئے بورڈ آف ایجوکیشن مقرر کیا تھا ، اور یہ کہ کچھ مہینوں میں پہلی کلاس پڑھانا تھی۔ مدر چرچ کے کلرک نے مجھے ایک درخواست بھیجی ، جس پر میں نے دستخط کیے۔ مجھے جلد ہی بورڈ آف ایجوکیشن کی طرف سے بطور شاگرد کی قبولیت کا نوٹس ملا۔ جب میں نے پرائمری کلاس میں داخلہ لیا تو مجھے کرسچن سائنس کا بہت کم علم تھا ، لیکن اس تعلیم نے مجھے حقیقی کام کا واضح اندازہ نہیں کیا۔ میں نے اس وقت صرف کچھ دن ہی درسی کتاب کی ملکیت حاصل کی تھی ، اور اس کو نہیں پڑھا تھا ، لہذا کلاس میں اس سے کئے گئے نقوش کو سمجھنے کے قابل نہیں تھا۔ جرمنی میں اپنے سال کے دوران میں نے متعدد بار درسی کتاب پڑھی اور اس کے ساتھ نماز کے ساتھ مطالعہ کیا ، متفرق تحریریں بھی ، اس کتاب نے ہمیں اس سال کے استاد کی حیثیت سے دیا۔ لہذا مسز ایڈی کے زیرانتظام کلاس میں مکمل تعلیم دینے کا وعدہ تابکاری کا دخش تھا ، اور میں نے اپنا پورا وقت اس نعمت کے لئے دعا کی تیاری کے لئے عبوری طور پر صرف کردیا۔

کلاس کے ملنے سے چند ہفتوں پہلے ، مسز ایڈی کے ذریعہ ایک ضمنی قانون شائع ہوا جس میں کرسچن سائنس سینٹینل میں لکھا گیا تھا کہ اس کلاس میں کوئی بھی داخل نہیں ہوگا جس نے تین سال سے کرسچن سائنس پر عمل نہیں کیا تھا۔ جب میں نے کرسچن سائنس کے بارے میں پہلی بار سنا تھا اس کو ابھی دو سال ہوئے تھے ، اور ایک سال بعد جب میں نے مشق کرنا شروع کی تھی۔ میری ٹیچر نے مجھے اس کے پاس بلایا اور کہا کہ ضمنی قانون نے مجھے بند کردیا ، اور مجھے بورڈ آف ایجوکیشن کو لکھ کر ان کو یہ بتانا ہوگا۔ میں نے جواب دیا کہ میں یہ نہیں کرسکتا ، کیونکہ اس نے مجھے بتایا تھا کہ خدا نے مجھے یہاں اس کلاس کے لئے لایا ہے ، اور اگر یہ سچ ہوتا تو ، ایک ضمنی قانون بھی مجھے باہر نہیں رکھ سکتا تھا ، اور اگر یہ سچ نہ ہوتا تو کچھ بھی نہیں کرسکتا تھا۔ مجھے اس میں ڈالیں؛ لیکن اگر ضمنی قانون نے مجھ پر پابندی عائد کردی تھی تو ، یہ ان لوگوں کے لئے تھا جنہوں نے مجھے قبول کیا تھا اور یہ مجھے اطلاع دیتے

- میں اپنے آپ سے دروازہ بند نہیں کرسکتا تھا۔ وہ اس کو قبول نہیں کرتی تھی ، لیکن میں اتنا عادی ہوچکا تھا کہ سمت کے ل. خدا پر پوری طرح انحصار کروں کہ مجھے کوئی پریشانی نہیں تھی۔ مجھے بورڈ آف ایجوکیشن کی طرف سے مزید کوئی لفظ نہیں ملا ، اور جب وقت آگیا کہ بوسٹن گیا اور اپنے آپ کو چرچ میں پیش کیا ، اور بغیر سوال کے کلاس میں لے جایا گیا۔

پھر میں نے ان سب سے شاندار ہفتوں کے بعد مجھے معلوم تھا۔ پہلے ہی لمحے سے کرسچن سائنس کا مضمون منظم اور واضح طور پر کھلا۔ مدت کے اختتام پر میں نے محسوس کیا کہ میں خدا کے بالکل تخت پر کھڑا ہوں اور انسان کی آواز سنتا ہوں ، ’’یہ میرا پیارا بیٹا ہے ، جس سے میں خوش ہوں۔‘‘ (متی 3: 17) اس تعلیم سے حاصل ہونے والی برکت نے میری سمجھ کو کھول دیا اور میرے لئے ایک الہی حکم بن گیا کہ وہ آگے بڑھ کر خدا کے اس تحفہ کو دوسروں تک پہنچا دے۔ دنیا کے اس عظیم رسول ، ایڈورڈ اے کمبال کی الہامی تعلیم پر قرض دینے والے ، اس کلاس اور بہت سے دوسرے لوگوں کو پڑھائے جانے والے اس شکریہ کے قرض کا کوئی لفظ اظہار نہیں کرسکتا۔ انہوں نے خدائی محبت کی تمام تر فراغت اور طاقت کو اس قدر واضح کردیا کہ اس کے طلبہ اس کی شفا یابی اور بچت کی طاقت کو دیکھنے میں ناکام نہیں ہوسکتے ہیں۔

مجھے بعد میں معلوم ہوا کہ جب بورڈ کے ممبروں کو پتہ چلا کہ نیا ضمنی قانون مجھ پر پابندی عائد کرتا ہے تو ، مسٹر کِم بال ، ٹیچر نے مسز ایڈی کو یہ کہتے ہوئے لکھا کہ انہوں نے مجھے قبول کیا ہے ، اور اس سے پوچھتے ہیں کہ کیا کیا جانا چاہئے۔ اس کے بارے میں. اس نے جواب دیا: "اس مثال میں ایک استثناء دیں اور اسے کلاس میں داخل کریں۔ پھر اسے اپنے مظاہرے سے کھڑا ہونے یا گرنے دو۔ یہ میرے لئے بعد میں ایک بہت بڑی نعمت تھی کیونکہ اس نے میرے لئے ایک معیار قائم کیا۔ کئی بار جب مشکلات پیدا ہوئیں اور غلطی سرگوشیاں کرتی کہ میں اس صورت حال کا مقابلہ نہیں کرسکتا ، کہ مجھے کافی معلوم نہیں تھا یا کافی اچھا نہیں تھا ، ہمارے قائد کی باتیں مجھ پر آئیں گی ، اور یہ خیال ، "میں مظاہرے کے ذریعہ اب تک کھڑا ہوا ہوں اور اب یہ ناکام نہیں ہوگا۔ تب میں بے خوف ہوکر آگے بڑھ جاتا۔

اس کلاس میں ایک سو اسیسی تھے ، اور اکیس کو پڑھانے کے لئے سرٹیفکیٹ دیئے گئے تھے۔ میں نے کسی کو حاصل کرنے کے بارے میں سوچا ہی نہیں تھا ، میری واحد امید ہے کہ بیماروں کو کیسے ٹھیک کیا گیا اس کے بارے میں مزید معلومات حاصل کریں۔ لیکن میری حیرت کی وجہ سے بورڈ نے مجھے پڑھانے کے لئے ایک سرٹیفکیٹ دیا ، اور مجھے جرمن سلطنت کے دارالحکومت برلن جانے اور وہاں کرچن سائنس قائم کرنے کی درخواست کی۔

کلاس کا کام مکمل ہونے کے بعد ، میں ڈریسڈن واپس آگیا ، جہاں میں گرمیوں کے اختتام تک کام کرتا رہا۔ میں نے اس شہر میں پانچ شاگردوں کی ایک کلاس سکھائی ، جن میں سے تین ہمارے پیارے کاز میں کارکن بن گئے ، اور تیس سال سے بھی زیادہ عرصہ گزرنے کے بعد بھی وہ سرگرم ، سچائی کے نتیجہ خیز رسول ہیں۔

چوتھا باب

1899 کے موسم گرما کے دوران میں برلن گیا اور مجھے ایک مناسب اپارٹمنٹ ملا جس میں رہائش پذیر ، اس کو دو سال کی مدت کے لئے لیز پر دے دیا۔ مالک کو یہ بتانا عقلمندی سمجھتا ہوں کہ میں اسے زندگی کے مقاصد کے علاوہ کسی اور چیز کے لئے استعمال کروں گا ، اور اس لیز میں اجازت حاصل ہے ، میں نے اسے بتایا کہ میں بائبل کے سبق سکھانے کے مقصد سے ملاقاتیں کروں گا۔ انہوں نے کبھی بھی کرسچن سائنس کے بارے میں نہیں سنا تھا ، اور یہ بیان کرنے کا یہ عقلمند طریقہ تھا۔ انہوں نے پوچھا کہ ان اجلاسوں میں کتنے شریک ہوں گے ، اور جیسا کہ میں ترقی کی تیاری کرنا چاہتا تھا ، میں نے اسے بتایا کہ لیز ختم ہونے سے پہلے پچیس پچاس ہوسکتے ہیں۔ اس سے یہ معلوم ہوا کہ میں حق کی طاقت کو اپنی طرف راغب کرنے کے بارے میں کتنا کم جانتا ہوں ، کیوں کہ ابتدائی چھ مہینوں میں ایک سو بیس سے زیادہ اجلاسوں میں شریک تھے۔ جب روحانی ذرائع سے بیمار مندمل ہوجاتے ہیں تو لوگوں کو دور رکھنا ناممکن ہے۔

ڈریسڈن میں میری اچھی میزبانہ کی ایک بہن ، ایک انگریزی خاتون ، مس امی بینٹینک بیچ ، میرے ساتھ برلن گئی اور وہاں آباد ہونے میں میری مدد کی۔ لوگوں کے پاس کام کرنے کے لئے میرے پاس پیسہ نہیں تھا ، اور ہم دو خواتین اتوار کی صبح تقریباًصبح کے وقت تک کام کرتے ، چرچ کے کمرے میں فرنیچر کا بندوبست کرتے ، پردے لٹکاتے ، اور صبح کی خدمت کے لئے واقعتا خوبصورت بناتے ، اور پھر ہم نے کام کیا قارئین۔

اکتوبر ، 1899 میں پہلے اتوار کو ہم نے اپنی پہلی خدمت کی ، جماعت میں آٹھ افراد موجود تھے۔ ایک جرمنی کی خاتون ، فریولین جوہانا برونو ، ایک کولوراڈو کے ڈینور کی کرسچن سائنس کی طالبہ اور اس کی بیٹی ، جو موسیقی کی تعلیم حاصل کررہی تھی۔ اس نے امریکہ میں اپنی بیٹی کے ذریعہ میرے آنے کے بارے میں سنا ہے ، اور ڈریسڈن کو مجھ سے یہ پوچھنے کے لئے لکھا تھا کہ عبادات کب اور کہاں رکھی جائیں گی۔ شکاگو کا ایک نوجوان تھا جو گانے کی تعلیم حاصل کررہا تھا ، جس کے اہل خانہ نے اسے میرا ڈریسڈن ایڈریس بھجوایا تھا ، اس نے مجھ سے بات چیت کرنے اور عبادات کے کھلنے پر حاضر ہونے کو کہا تھا۔ وہ اپنے ساتھ ایک یا دو نوجوان خواتین لائے جو میوزک کی طالبہ تھیں ، اور ایک جرمن امریکی شخص اور اس کی اہلیہ بھی تھیں جو اس گھر میں ڈینور لیڈی کے ساتھ رہتی تھیں اور وہ اسے لے کر آئے تھے۔

افتتاحی خدمت کے بعد پیر کی صبح شفا یابی کے لئے پہلی کال آئی۔ مریض ایک جرمن خاتون تھی جو پندرہ سال سے علیل تھی۔ جس شخص نے مجھے کیس کے بارے میں بتایا وہ کرسچن سائنس پر یقین نہیں رکھتی تھی ، اور اس نے مجھے بعد میں بتایا کہ وہ مجھے شرمندہ کرنے اور کرسچن سائنس کی غلطی کو مجھ سے ایسا کیس لینے کا کہہ کر ثابت کرنے کی امید کرتی ہے۔ وہ میرے ساتھ مریض کے گھر گئی اور اس نے مجھے اس حالت سے متعلق کچھ بتایا ، لیکن میں نے بعد میں پوری تفصیل نہیں سنی۔ یہ معاملہ صحت کی طاقت کا ایسا ہی شاندار مظاہرہ تھا کہ میں اس کو پورا کروں گا۔

وہ خاتون ایک کنسرٹ کی گلوکارہ رہی تھیں اور پہلے شہنشاہ کی اہلیہ ، ایمپریس آگسٹا کی پسندیدہ تھیں۔ جب وہ معالج کو رمیٹک گاؤٹ کہلانے میں مبتلا ہونے لگی تو ، اس کے پاس مہارانی کے اپنے ڈاکٹر تھے ، جو شاید ملک میں سب سے بہتر تھے ، لیکن ، ڈاکٹروں کی کوششوں اور اپنے اور دوستوں کی دعاؤں کے باوجود ، وہ مسلسل بدتر ہوتی گئی۔ مہارانی نے دوسرے ممالک کے معالجین کو بلایا ، لیکن اس کا کوئی فائدہ نہ ہوا اور پانچ سال کے اختتام پر ، اپنی دیگر پریشانیوں کے علاوہ ، وہ اندھی ہوچکی تھی۔ گاؤٹ نے تشدد میں اضافہ کیا ، اور درد اتنا شدید تھا کہ معالجین نے اسے اسے مارفین دے دیا تاکہ وہ اسے برداشت کر سکے۔ جب میں پہلی بار اس سے ملا ، تو وہ کئی سالوں سے مورفین کے اثر و رسوخ سے آزاد نہیں ہوئی تھی ، لیکن اسے مسلسل نشہ آور رکھا گیا تھا۔ اس نے اسے مزید تکلیف سے آزاد نہیں کرایا ، بلکہ صرف اس پر قابو پایا۔ اس کی منشیات کی خواہش اتنی بڑھ چکی تھی کہ ڈاکٹروں نے اسے اس کی اجازت دینا ضروری سمجھا ، تکلیف اتنی شدید ہے کہ اس طمع سے انکار کرنا ان کو غیر انسانی لگتا تھا۔

مجھے تکلیف یا منشیات کے بارے میں کچھ نہیں بتایا گیا ، اور یہ کچھ ہفتوں کے بعد ، جب ایک دوست ، جو جرمن جانتا تھا ، اس کے ساتھ ملنے گیا ، مریض کی بیٹی نے اسے ان حالات سے بتایا ، اور کہا کہ درد اور پہلے علاج سے ہی منشیات کی خواہش ٹھیک ہوگئی تھی۔ اندھا پن بھی تھوڑی ہی دیر میں ختم ہو گیا ، اور تمام خطوط پر مستقل ترقی ہوتی رہی۔ کئی سالوں سے وہ صرف وہ چادر اٹھا کر چل رہی تھی جس پر وہ بچھاتی تھی۔ معالجین کا کہنا تھا کہ اس کے تمام جوڑ جگہ سے دور تھے اور چاک سے بھرے ہوئے ہیں ، لہذا اس کے جسم کے کسی بھی حصے کو منتقل کرنے کی کوشش کرنے والی اذیت ناک اذیت کا باعث بنا۔ تھوڑی ہی دیر میں اس حالت پر قابو پالیا گیا ، تاکہ وہ پہیےوالی کرسی پر بیٹھ گئیں اور آسانی سے اٹھاسکیں اور کچھ ہفتوں بعد اپنی مدد آپ کی۔ انہیں کرسچن سائنس ہیمنال دیا گیا تھا ، اور ان کی بیٹی ، جو بہت کم انگریزی جانتی تھیں ، کو مسز ایڈی کی بھجن پڑھنا سیکھایا گیا تھا۔ اس نے ان کا کردار ادا کیا ، اور ہم نے انہیں بار بار گانا اور جلد ہی ماں کو الفاظ اور ان کے معنی کے کچھ سکھائے۔ اور ہزاروں کی توجہ دلانے والی آواز پہلی بار بے ہوش اور بچوں کی طرح سنائی دینے لگی ، لیکن آہستہ آہستہ طاقت اور مٹھاس جمع کرنا ، اس کے چہروں کی خوشی سے چمکتے ہوئے اس نے ان مقدس گانوں میں اظہار محبت کی جسارت میں پیا۔ ہم تینوں ہر بار ان کے گاتے جب میں ان سے ملتا۔ واقعتا یہ ایک مقدس تجربہ تھا۔

نئے سال کے دن ، اس خاتون ، فارو بوس ، اپنے گھر پر پتھر کی سیڑھیوں کی دو پروازیں چلائیں ، پورے شہر میں کئی میل کی مسافت طاری کی ، اور اپنے گھر پر سیڑھیاں کی دو پروازیں چل کر اپنی پہلی کرسچن سائنس خدمت میں حاضر ہوئے۔ اس کے فورا. بعد ہی شفا یابی کا کام ختم ہوگیا اور وہ اپنے معاملات کی طرف گامزن ہوگئی ، جو کرسچن سائنس کی مستفید طاقت کی ایک زندہ مثال ہے۔

اس معالجے نے بہت توجہ مبذول کروائی ، اور لوگ اس کی وجہ سے دور دراز سے آئے تھے۔ ایک اہم خصوصیت یہ تھی کہ انہوں نے کبھی نہیں کہا کہ وہ علاج کروانے آئے ہیں۔ انہوں نے ہمیشہ کہا کہ وہ مسیح کے شفا یابی سے شفا پانے آئے ہیں۔ مسیح پر امید اور یقین کی اس حالت نے شفا بخش کو آسان اور فطری بنا دیا۔

اس شفا یابی کی خبر کی وجہ سے ، متلاشی امپیریل کورٹ سے اور عاجزانہ زندگی سے ، بڑے شہروں ، چھوٹے شہروں اور دیہات سے ، یہاں تک کہ سمندر کے دور دراز جزیروں سے بھی آئے۔ ایک شخص جو آیا تھا وہ شمالی بحر میں آئل آف روگن پر ایک منشیات فروش تھا ، اس نے اپنے اسٹور کے لئے سامان خریدنے کے لئے نیم سفر کیا تھا۔ اس نے منشیات فروش کو بتایا جس کے ساتھ وہ اپنی بیوی کا کاروبار کر رہا ہے ، جو ناامید ناجائز تھا اور کئی سالوں سے لاچار تھا اور اس کا چھوٹا اپاہج لڑکا تھا۔ منشیات فروش نے اس کو حیرت انگیز شفا بخش ہونے کے پیش گوئی کے واقعے کے بارے میں بتایا اور اسے ٹھیک ہونے والی خاتون کے گھر بھیجا ، جس نے اسے میرا پتہ دیا۔ اس نے اسے بتایا کہ یہ خدا کا کام ہے ، اور اس کی بیوی اور بچے اور باقی سب ٹھیک ہوسکتے ہیں۔

اس منشیات فروش کو بتایا گیا تھا کہ وہ اپنی بیوی کو ہر صبح و شام نوےواں پہلا زبور پڑھتے ہیں ، اور اگر ممکن ہو تو وہ اسے حفظ کریں اور اپنے ساتھی کی حیثیت سے اپنے پاس رکھیں۔ یہ کام غیر حاضر رہا اور کچھ ہی ہفتوں میں یہ لفظ آیا کہ بیوی پوری طرح سے ٹھیک ہوگئی ہے اور چھوٹا لڑکا آزاد ہے۔ کنبہ خوشگوار تھا ، یہ جان کر کہ خدا نے انھیں شفا بخشی ہے اور اپنی موجودگی کے اس نئے انکشاف کے ذریعہ ان کو برکت دی۔

اس وقت جرمن زبان میں کوئی کرسچن سائنس نہیں تھا ، لہذا سچائی صرف لفظی الفاظ سے دی جاسکتی تھی ، کچھ آسان بیانات دیتے تھے اور ماسٹر کرسچن ، مسیح یسوع کے الفاظ اور کام کی طرف ان کی نشاندہی کرتے تھے۔ میں ان کے ساتھ بہت ہی کم بات کرسکتا تھا اور مجھے احساس ہوا کہ صرف خدا ہی ان کے شعور کو روشن کرسکتا ہے ، لہذا ہمیشہ کوشش کی کہ خود کو راہ سے دور کردے۔

علاج کے لئے آنے والے بیشتر افراد کو انگریزی نہیں آتی تھی ، اور چونکہ ان کی زبان کے بارے میں میرا علم اتنا محدود تھا ، اس لئے ذاتی رابطہ بہت کم تھا۔ صرف اس دماغ نے یہ کام اس حقیقت سے ثابت کیا تھا کہ صحتیاب ہونے والوں میں سے اکثریت نے یہ تسلیم کیا تھا کہ خدا کی قدرت ہی نے انھیں شفا بخش دی ہے ، اور اسی محبت نے ان کو صحت یاب کرنے والے بہت سے خدشات کو ختم کردیا تھا جن سے معلوم ہوتا تھا کہ ان کی زندگی تاریک ہوگئی ہے۔ انہوں نے مکمل طور پر یقین کیا کہ خدا نے ایک میسنجر کو تمام مصائب دور کرنے کے لئے بھیجا تھا اور وہ ان کو باپ کی طرح پیار کرتا تھا۔

یہ عبادات اتوار کے روز انگریزی میں اور ایک ہفتہ کے دن اسی گھنٹوں میں امریکہ میں کی گئیں۔ جرمنی کی عبادات اتوار کی صبح دس بجے اور جمعہ کی شام چھتیس بجے منعقد کی گئیں۔ برلن میں میری پہلی جرمن طالبہ ، فریولین جوہانا برونو نے اتوار کے اسباق کا ترجمہ کیا ، اور میں اور اس نے اسے پڑھا۔ میں ہر ہفتے اس کے ساتھ کئی گھنٹے مشق کرتا تھا۔ انگریزی سبق کی مستقل دعا اور اس کے مقدس مطالعہ کے ذریعہ ، اس کی کوچنگ کے علاوہ ، میں جلد ہی ترجمہ شدہ لفظ کو سمجھنے اور اسے پڑھنے میں کامیاب ہوگیا تاکہ یہ نہ صرف لوگوں کے لئے اطمینان بخش رہا بلکہ اس سے زیادہ شفا بخش نکلا۔ یہ صاف ستھرا مظاہرہ تھا ، کیوں کہ میں نے کبھی جرمن زبان کا مطالعہ نہیں کیا تھا ، اس لئے مجھے اپنا سارا وقت کرسچن سائنس کے مطالعہ اور شفا یابی کے کام پر دینا پڑتا تھا۔

جرمن جرمن وسط ہفتہ کے اجلاسوں میں ، جب وہ چھوٹا تھا ، پچاس سال سے کم ، ہم حاضرین کو جتنی بھی کاپیاں ، سائنس اور صحت کی صحیفوں کی کلید کے ساتھ قرضہ دیتے تھے ، جیسا کہ ہمارے پاس تھا۔ اور وہ خود کو ایک ساتھ جوڑیں گے اور ڈیسک سے پڑھنے کی پیروی کریں گے۔ میں انگریزی میں درسی کتاب سے ایک پیراگراف پڑھتا ہوں۔ تب دوسرا قاری جرمن میں ایک مفت ترجمہ پڑھتا تھا۔ پھر ہم اس پر پھر جائیں گے ، اس بار اسے جملے میں انگریزی میں اور پھر جرمن زبان میں لے کر جائیں گے ، تاکہ وہ اس سے واقف ہوں۔ بہت سارے جرمن جو سچے کے ساتھ بے حد دلچسپی کے طالب تھے ، انہوں نے بہت کم جرمن انگریزی لغت خریدے اور ان کے ساتھ درسی کتاب کا مطالعہ کیا۔ ایک شخص ، ایک کتابی ، جس کے کاروبار کے اوقات صبح سات بجے سے شام نو بجے تک تھے ، ہر صبح اٹھ کر چار بجے اپنی تعلیم شروع کرتے تھے۔ ایک لغت کی مدد سے اس نے ایک سال میں کتاب پڑھی۔ یہ واقعی وہ خواہش تھی جو دعا ہے اور اس کا اپنا جواب بھی شامل ہے۔ اس شخص نے طاقت کے ساتھ حق کو حاصل کیا ، اور اس کے باوجود مضبوط طبقاتی خطوط جو اسے دبا رکھے ہوئے تھے ، وہ روح کے زور پر اٹھ کھڑا ہوا اور ایک عمدہ کارکن اور اپنی قوم کے لئے سچ کا پیامبر بن گیا۔

اس وقت شفا یابی کا ایک معاملہ ایک خاتون کا تھا جو پوری طرح سے اندھی تھی۔ وہ چونسٹھ سال کی تھی اور یقین کرتی تھی کہ وہ اس دور تک پہنچی ہے جب زندگی اور امیدیں اس کے پیچھے تھیں۔ یسوع نے جس عورت کو شفا دی تھی اس کی طرح ، اس نے بھی "بہت سے معالجین کی بہت سی چیزوں کا سامنا کرنا پڑا" ، اور آخر کار بتایا گیا تھا کہ اس کی نظر بحال ہونے کا کوئی امکان نہیں ہے کیونکہ آپٹک اعصاب کو نقصان پہنچا تھا۔ شفا یابی کا یہ معاملہ اس نتیجے پر ثابت ہوا کہ غلطی روحانی شعور کی موجودگی میں نہیں کھڑی ہوسکتی ہے ، کہ میں یہ بات یہاں دیتا ہوں کہ جو بھی پڑھتا ہے وہ اس سوچ کی کیفیت کو جان سکتا ہے جو ہمیں سائنسی اور فوری طور پر ٹھیک کرنے کے قابل بنائے گا ، جیسا کہ مسیح یسوع اور میری بیکر ایڈی نے کیا ۔

میں ہر دن کے بہت سارے گھنٹوں اس قدر مصروف رہتا تھا ، جب کہ میں نے کچھ کتابیں پڑھ کر سنڈے کے اسباق کا مطالعہ کیا تھا ، اپنے آپ کو کھونا اور مشق اور چرچ کے مسائل کو ایک طرف چھوڑنا کافی مشکل تھا۔ میری سوچ کو تازہ کرنے کے لئے پہاڑ ، جیسا کہ گلیل کی پہاڑیوں پر ماسٹر تھا۔ ایک وقت کے بعد ، میرے پاس بانجھ پن کا احساس پیدا ہوا ، روحانی بھوک کے ساتھ ، جو صرف حق کے گہرے مسودوں اور خدا کے ساتھ شعور کی بات چیت سے ہی راحت بخش ہوسکتی ہے۔

میں نے صبح کے اوقات میں مریضوں کو دیکھنے کے بعد ایک دن خاموش رہنے کا اہتمام کیا۔ دوپہر سے پہلے ہی مجھے کسی کے ساتھ بات کرنے کے لئے دروازے پر بلایا گیا ، اور وہاں ایک ایسی عورت ملی جس نے مجھے بتایا کہ اس کی ماں نے اپنی آنکھوں سے تکلیف اٹھائی ہے ، اور اسے بتایا گیا ہے کہ اگر وہ اپنی ماں کو میرے پاس لے آئیں تو میں اسے شفا بخشوں گا۔ . میں نے اسے مختصر طور پر کہا کہ اگلے دن اس کی ماں کو لے آئو۔

آدھی رات تک سارا دوپہر اور شام میری کتابیں ، بائبل ، سائنس اور صحت ، اور متفرق تحریروں کے ساتھ گزارتے تھے۔ میں نے پڑھ کر غور کیا۔ سوچ میں میں یسوع کے ساتھ چلتا تھا اور اس کی تعلیم موصول ہوئی۔ میں نے کسی حد تک مسز ایڈی کی تعلیم کے جذبے میں داخل ہوا ، اور خدا کی موجودگی سے آگاہ ہوکر صبح کی طرف سو گیا ، اور اسی افزودہ سوچ کے ساتھ بیدار ہوا۔

ناشتے کے بعد میں باورچی خانے میں گیا پھولوں کا بندوبست کرنے کے لئے جو اندر بھیجے گئے تھے۔ دروازے کی گھنٹی بجی ، اور نوکرانی دروازے تک گئی۔ وہ بجائے حوصلہ افزائی ہوئی اور مجھے کچھ بتانے لگی ، لیکن میں نے اس سے خاموش رہنے کو کہا اور اپنی سوچ جاری رکھی۔ پھر میں نے کچھ پھول نکال کر کمرے میں پہنچے۔ جب میں نے دروازہ کھولا تو مجھے وہاں دو خواتین بیٹھی ہوئی تھیں ، ایک وہ جو پہلے دن آئی تھی ، اور ایک خوبصورت سفید بالوں والی عورت۔ چھوٹے نے مجھے بتایا کہ یہ اس کی ماں ہے اور وہ اندھا ہے ، اور والدہ اس بیان سے گونج اٹھیں۔

اس تجویز نے ایک لمحہ کے لئے بھی میری سوچ کو داخل نہیں کیا۔ فورا! ہی خیال آیا ، "نہیں ، نہیں ، نہیں - خدا کی پوری کائنات میں نہیں!" ماں نے کچھ دیر بات کی اور میں دھوپ میں نظر آرہا ، خدائی محبت کی موجودگی میں خوش ، اور اس کے ہوش میں نہیں کہ وہ کیا کہہ رہی ہے۔ جب وہ رک گئی تو میں نے اس کے پیروں تک اس کی مدد کرنے کے لئے اس کے ہاتھ پکڑے اور اسے بتایا کہ شاید وہ چلی جائے۔ انہوں نے کہا کہ اگر خدا نے اسے ایک بار اس کی بیٹی کے چہرے پر نگاہ ڈال دی تو وہ مرنے پر راضی ہوجائے گی۔ میں نے جواب دیا کہ خدا اسے اپنی بیٹی کے چہرے کو دیکھنے اور زندہ رہنے دیتا ہے۔ اس کے بعد میں نے انھیں صبح بخیر کی دعوت دی اور کمرے سے باہر چلا گیا ، اور اگلی صبح تک دوبارہ ان کے بارے میں نہیں سوچا جب میں نے اپنے مطالعے میں دن کے کام کا آغاز کرنے کے لئے داخلہ لیا تھا۔ میں نے وہاں ماں کو پایا ، خوشی کے ساتھ روشن؛ اور جب میں نے اس سے پوچھا کہ کیا اس کی بیٹی دوسرے کمرے میں انتظار کر رہی ہے ، تو اس نے مجھ سے نہیں کہا ، وہ تنہا آئی تھی ، کہ اس کی نظر بحال ہوگئی ہے اور وہ اس طرح دیکھ سکتی ہے جب ایک جوان لڑکی تھی۔

میں نے پھر اس سے پوچھا کہ کیا وہ اندھا ہو چکی ہے؟ سچائی نے میرے شعور کو اتنا بھر دیا تھا کہ غلطی کا بیان مجھ تک نہیں پہنچا تھا۔ اور ، اس کہانی کے باوجود جو انہوں نے مجھے ایک دن پہلے بتایا تھا ، میں اس سے بالکل بے ہوش تھا کہ حالات کیا معلوم ہورہے ہیں۔ اس نے اپنے پچھلے دکھوں کے بارے میں بتایا ، اور کہا کہ جب صبح سے پہلے وہ میرے گھر سے نکلی تھی ، تو اس کی بیٹی اسے اسٹریٹ کار کی طرف لے گئی اور اسے ایک نشست میں بٹھایا ، اور اس نے کھڑکی سے باہر دیکھا اور گلی کو دیکھا اور درخت اور پھول اور ایک لمحہ کے لئے بھول گئے کہ وہ اندھا ہو چکی تھی۔ اس نے جو کچھ دیکھا اس کے بارے میں انھوں نے بتایا ، تب ان کی بیٹی چیخ اٹھی اور لوگوں کو بتایا کہ اس کی والدہ کئی سالوں سے نہیں دیکھ پا رہی ہیں۔

اس اسٹریٹ کار پر موجود لوگوں کے لئے یہ ایک سنسنی خیز تجربہ رہا ہوگا ، کیونکہ ماں اور بیٹی دونوں نے اپنی گذشتہ تکلیف کے بارے میں بتایا اور خدا نے اسے شفا بخشا۔ مسیح کی طاقت کے اس مظاہرے کی موجودگی میں کوئی بھی الفاظ اس خوف کو بیان نہیں کرسکے جس نے میری سوچ کو بھر دیا۔

ہماری ہفتہ وار گواہی کی ملاقات اگلی شام ہوئی ، اور ہر وہ شخص جو اس اسٹریٹ کار پر تھا اس سروس میں شریک ہوا۔ نشستیں سب بھری گئیں اور لوگ ہال اور ملحقہ کمروں میں کھڑے ہوگئے۔ اسی روح نے اس جماعت کو پھیلادیا جو ابتدائی رسولوں کی شفایابی کے مشاہدہ کرنے والوں میں پایا جاتا تھا۔

معالجوں کی توجہ اپنی طرف مبذول کروانے لگی ، اور پادریوں نے ان لوگوں کی تعداد کو جنم دیا جو ان نئے امریکی مذہب کے نام سے رجوع کررہے تھے۔ ایک جرمن ماہر ، جو مہارانی کی منتظر خاتون تھیں ، نے مجھے بتایا کہ شہنشاہ کے محل میں گیندیں بڑی حد تک کرسچن سائنس کی گواہی کی میٹنگز بن گئیں۔ جب یہ نوجوان رقص کر رہے تھے تو عدالت کے عہدیدار اور چیپرون کھڑے ہوئے اور اپنے دوستوں اور جاننے والوں میں شفا یابی کے معاملات کے بارے میں بتایا ، اور مسز ایڈی کی درسی کتاب اور جو حیرت انگیز کام ہو رہا تھا ، جیسے یسوع مسیح نے کیا۔ گلیل کی جھیل کے ساحل پر۔ جب یہ بات پادریوں کے کانوں تک پہنچی تو اس نے انہیں پریشانی میں مبتلا کردیا اور انہوں نے مہادانی کے توسط سے اس تحریک کو روکنے کی ہر ممکن کوشش کی ، جو چرچ کی ایک سخت خاتون تھیں۔ اس نے اپنے شوہر ، شہنشاہ کی مداخلت کی کوشش کی ، لیکن اسے کوئی دلچسپی نہیں تھی اور اس نے اسے کوئی اعتبار نہیں کیا۔

پانچواں باب

اسی وقت میں ایک فوجی افسر کی اہلیہ اور ساس ، جو شاہی عدالت میں ایک بہت ہی اعلی عہدے پر قابض تھیں ، اور جو اس کی عظمت کا بہت گہرا دوست تھا ، نے میرے گھر میں ہونے والی ملاقاتوں میں شرکت کرنا شروع کی۔ یہ دونوں خواتین پرجوش روحانیت پسند تھیں ، اور عبادات کے بعد لوگوں کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے ، انھیں یہ کہتے ہوئے کہ کرسچن سائنس اور روحانیت ایک ہیں اور ان کو مل جانا چاہئے۔ میں نے انہیں سمجھایا کہ یہ ایک غلطی تھی ، کہ کرسچن سائنس اور روحانیت دن اور رات کی طرح مختلف تھی ، لیکن وہ ہمارے لوگوں میں اس غلطی کو متعارف کرانے کی کوشش کرتے رہے ، اور آخر کار مجھے ان سے یہ درخواست کرنے پر مجبور کیا گیا کہ وہ آکر رہیں۔ چونکہ عبادات نجی تھیں اور میرے گھر میں رکھی جاتی تھیں ، میں یہ کرسکتا تھا۔ وہ شدید ناراض ہوئے اور ایک ہی وقت میں شاہی عدالت کی نشست پوٹسڈم میں واقع اپنے گھر میں عہدیداروں اور فوج کے افسران اور ان کے اہل خانہ کو شرکت کی دعوت دی۔ چونکہ اس خاندان کی طرف سے ایک دعوت کسی شاہی حکم کے مترادف تھی ، لہذا لوگ جانے سے انکار نہیں کرسکتے تھے۔ ان ملاقاتوں میں کاؤنٹیس نے سائنس اور صحت سے مطالعہ کیا ، اس کے بعد کرسچن سائنس جرنل کی طرف سے کچھ شہادتیں دی گئیں ، اور پھر ایک روحانیت پسند میڈیم نے انھیں احساس بخشا۔

لوگ ان مجلسوں میں شرکت پر مجبور ہونے پر اس قدر مشتعل ہو گئے کہ یہ ایک عوامی اسکینڈل بن گیا ، اور اگرچہ یہ ایک غیر تحریری قانون تھا کہ کوئی بھی بادشاہ کو کسی مضمون کا تعارف نہیں کرسکتا جب تک کہ اس کی درخواست پر ان ملاقاتوں کی ایک رپورٹ آخر تک نہ کردی گئی۔ اس کی عظمت اپنی فوج کے ایک اعلی عہدیدار کے ذریعہ۔ گفتگو کے دوران انھیں برلن میں کرسچن تحریک کی کہانی سنائی گئی ، یہ دعویٰ کیا گیا تھا کہ لوگوں میں بہت زیادہ شفا یابی کی گئی ہے ، اور پادریوں کو خوف تھا کہ ریاستی چرچ اپنی بہت سی دلچسپی کھو رہا ہے۔ ممبران

شہنشاہ بہت ناراض ہوا اور اس نے فورا؛ ہی حکم جاری کیا کہ ان ملاقاتوں کو روکا جائے۔ کہ پولیس برلن یا سلطنت میں کسی اور جگہ پر ہونے والی کرسچن میٹنگوں کو روکنے ، پوڈسڈم میٹنگوں میں حصہ لینے والے میڈیم کی تحقیقات کرے اور اس کو سزا دی اور پھر امریکی عورت کے پیچھے چل کر اس سے نجات حاصل کرے اور اس تعلیم کو ختم کرے۔ انہوں نے میڈیم کو ایک دھوکہ دہی کا پتہ چلا اور اسے پانچ سال کے لئے جیل بھیج دیا ، اور پھر ہمارے کام کے بعد شروع کیا۔

میرے گھر میں ہونے والی عبادات میں حاضری اس حد تک بڑھ گئی تھی کہ کچھ مہینے پہلے ہال ڈھونڈنا ضروری ہوگیا تھا۔ ہمیں ایک خوبصورت ملی تھی جسے قیصرن آگسٹا وکٹوریا سیل کہا جاتا ہے۔ یہ ایک آرٹ اسکول میں تھا جو مہارانی کی سرپرستی میں تھا ، اور ڈائریکٹر کاؤنٹیس شونبرگ وان کوٹا تھا ، جو کبھی کبھی خود کو یقین دلانے کے لئے میٹنگوں میں شریک ہوتا تھا کہ کرسچن سائنس بالکل ٹھیک ہے۔

شہنشاہ نے ہمارے خلاف پہلی بار اطلاع دی کہ اس اسکول کے اس ڈائریکٹر کے ذریعہ ہوا ، جس نے مجھے مطلع کیا کہ اسے ہدایت کی گئی ہے کہ ہم دوبارہ سیل کو عبادات کے لئے استعمال نہ کریں۔ وہ خود ہی مجھے بتانے آئی تھی کہ انہیں شدید افسوس اور شرم آتی ہے ، لیکن جیسا کہ اس نے بتایا تھا وہ کرنا چاہئے۔ چونکہ ہمارے پاس لوگوں کو پہلے سے آگاہ کرنے کا کوئی طریقہ نہیں تھا ، اس عمارت کے دونوں اطراف گلی کے ساتھ متعدد باقاعدہ حاضر اہلکار لوگوں کو یہ بتانے کے لئے کھڑے تھے کہ آئے تھے کہ اس شام کوئی خدمت نہیں ہوگی ، اور نہ ہی دوبارہ اطلاع آنے تک دوبارہ۔ ان کے پتوں کو لیا گیا تھا تاکہ جب ہم دوبارہ شروع ہوں تو انہیں مطلع کیا جاسکے۔

اگلے دن میرے مالک مکان نے مجھے تین دن کے اندر اپارٹمنٹ خالی کرنے کے لئے تحریری نوٹس بھجوایا اور مجھے متنبہ کیا کہ اگر میں نے ایسا نہیں کیا تو میری چیزیں گلی میں کھڑا کردیں گی۔ میں ایک ساتھ ہی امریکی سفارت خانے گیا اور ایک وکیل کا نام حاصل کیا جس کے پاس میں نے نوٹس لیا تھا اور میرا لیز لیا تھا۔ اس نے مجھے بتایا کہ مجھے کوئی پریشانی نہیں ہے ، یہ کہ برلن میں لیزیں جاگیرداروں کے لئے دی گئیں ، کرایہ داروں کے لئے نہیں۔ میں نے فوراًہی ایک اور اپارٹمنٹ لیز پر حاصل کیا ، لیکن جب فرنیچر کے صرف چند ٹکڑے اندر آئے تو پولیس نے مکان مالک کو اطلاع دی کہ میں ایک ناپسندیدہ کرایہ دار ہوں ، اور اس نے مجھے اندر جانے کی اجازت دینے سے انکار کردیا۔ مجھے اپنا فرنیچر رکھنا پڑا ، اور اس کے لئے کئی مہینے رہنے کے لئے جگہ نہیں مل پائے۔

میرے ایک دوست جو اکیلے رہتے تھے اس نے مجھے دعوت دی کہ وہ اس کے ساتھ رہیں جب تک کہ مجھے اپنا کوئی مکان نہ مل سکے ، لیکن میں وہاں صرف تین دن تھا جب پولیس نے مجھے تلاش کیا ، اور اس کے مالک مکان نے اسے اطلاع دی کہ اگر میں دہلیز عبور کرتا ہوں تو ایک بار پھر ، اس کی چیزیں گلی میں تین دن کے نوٹس پر رکھی گئیں۔ میں یہاں اور وہیں رہا ، کبھی کبھی مہمان کی حیثیت سے ، اور جہاں میں رہائش کی قیمت ادا کرسکتا تھا ، لیکن ایک وقت میں دو یا تین رات سے زیادہ کبھی نہیں ہوتا تھا ، جیسا کہ پولیس نے ہمیشہ لوگوں کو متنبہ کیا تھا۔

ہم لوگوں سے رابطے میں رہتے رہے ، اور مختلف گھروں میں چھوٹے گروہوں کو اسباق پڑھتے ، کبھی کبھی دن میں دو یا تین گروہوں سے ملتے۔ اس سے ہر ہفتے جرمن میں کم از کم دس اور انگلش میں دو یا تین عبادات انجام دی جاتی ہیں۔ وہ یقینا. موسیقی کے بغیر تھے ، جیسا کہ ہم جانتے تھے کہ انھیں توجہ مبذول نہیں کرنی چاہئے یا پولیس کے ذریعہ انھیں منع کیا جائے گا ، اور وہ نجی گھروں میں تھے۔ کچھ مہینوں کے بعد مجھے ایک گھر میں ایک خوشگوار اپارٹمنٹ مل گیا جو ملک میں رہتا تھا اور اسے شہر کے امور یا پولیس سے کم دلچسپی تھی۔ میں نے اسے حکام کے رویے سے آگاہ کیا ، لیکن اس نے مجھے اپنا اپارٹمنٹ لے جانے دیا ، جس نے مجھے بہت سارے آنے والوں سے باز رہنے کی درخواست کی۔

اس سارے عرصے کے دوران ، میں مریضوں کو حاصل کرنے کے لئے کوئی جگہ نہیں رکھتا تھا ، اور گھر گھر گھر جاتا تھا ، ان میں سے کچھ کو اپنے گھروں میں اور دوسروں کو دوستوں کے گھروں میں دیکھ کر۔ شاید اس کے چھ مہینوں کے بعد ، اس دوران میں نے دن میں سولہ سے اٹھارہ گھنٹے تک کام کیا ، مجھے چرچ کے لئے ایک اپارٹمنٹ ملا جہاں مجھے مریضوں کو لینے کی اجازت دی گئی ، اور جتنی عبادات ہم نے منتخب کیں ، لیکن موسیقی کے بغیر۔ اس سے پہلے ہم نے ایک ہال ڈھونڈنے کی کوشش کی تھی ، لیکن جہاں بھی جاتے ہم نے دیکھا کہ پولیس نے ہمارے خلاف لوگوں کو متنبہ کیا ہے۔ اب ہم جس گھر میں منتقل ہوئے تھے اس کا مالک ایک امریکی تھا ، اور اس وقت وہ واحد امریکی تھا جو برلن میں ایک اپارٹمنٹ مکان کا مالک تھا۔ خدائی محبت نے یقیناًمجھے اس گھر اور اس نیک آدمی کی طرف رہنمائی کی جو حکومت کے ذریعہ ہمارے چھوٹے بینڈ پر ہونے والے ظلم و ستم کے بارے میں جانتا تھا ، اور ہمدرد تھا کیونکہ اسے لگا کہ ہم نے اچھی ہمت کا مظاہرہ کیا ہے اور اپنے خدا اور اس کی وجہ پر پورا اعتماد ظاہر کیا ہے ، اور اس لئے کہ وہ ایک امریکی تھا اور مذہبی آزادی پر یقین رکھتا تھا۔

ریڈنگ روم کھولنے اور کچھ مہینوں کے لئے اتوار کی عبادات اور گواہ ملاقاتیں کرنے کے بعد ، ہمیشہ ان کے گانے بجانے کے بجائے تسبیح پڑھتے ، ہمارے کچھ لوگوں کو ایک ہال ملا۔ یہ ایک اطالوی ملکیت والے ناچنے والے اسکول میں تھا ، اور ایک جھنڈے پڑوس میں برلن کے ایک پرانے حصے میں تھا ، لیکن یہ گلی سے پیچھے والے باغ میں تھا ، اور اس سے زیادہ توجہ دینے کی بجائے اس طرف توجہ مبذول کرنے کے لئے کم مناسب تھا۔ لینے کا فیصلہ کرنے سے پہلے ، ہم نے مالک کو بتایا کہ اگر وہ ہمیں کرایہ دار کے طور پر لے جاتا ہے تو اسے پولیس سے پریشانی ہو سکتی ہے۔ اس نے مجھے یقین دلایا کہ یہ اس سے باز نہیں آئے گا۔ انہوں نے کہا کہ وہ ایک اطالوی شہری ہے اور اس عمارت کا مالک ہے ، اور وہ جرمن پولیس کا کوئی عقلمند فرمانبردار نہیں تھا اور نہ ہی ان سے خوفزدہ ہے۔

کرسچن چرچ کے لئے یہ ایک عجیب جگہ معلوم ہوتی تھی ، کیوں کہ ہمیں ایک جھنجھوڑا آرچ وے سے گزرنا پڑا جہاں گاڑیاں ایک مستحکم صحن کی طرح محفوظ تھیں جبکہ ہال خود ہی اس کے مقصد کے مختلف کردار کا گواہ تھا۔ لیکن ہم اس جگہ کے بہت شکرگزار تھے جس میں ہم آزاد تھے اور یہ ان تمام لوگوں کے لئے کافی تعداد میں تھا جو آنے کی خواہش رکھتے تھے کہ ہمیں پیشی کی کوئی پرواہ نہیں ہوئی - ہمیں ایک ایسے گروپ کی طرح خوشی ہوئی جیسے ہم شاہی کے چیپل میں مل رہے تھے۔ عدالت۔

خدا نے یہاں کام کو برکت دی۔ اجلاسوں میں بہت سے معالجے تھے ، اور جیسے ہی یہ لفظ فوراًپھیل گیا کہ ہم دوبارہ عبادات انجام دے رہے ہیں ، چھوٹی سی جگہ سچائی کے شوقین اور پُرجوش متلاشیوں سے پُر ہے۔

ایک اتوار کی صبح دو پولیس افسر میرے جوابات کے لئے تحریری سوالات کی ایک فہرست کے ساتھ عبادات کے پاس آئے۔ مجھے معلوم ہوا کہ یہ سوالات ایک مضمون پر مبنی تھے جو کچھ دن پہلے ایک اخبار میں شائع ہوا تھا۔ یہ ایک مضحکہ خیز بیان تھا ، جس کا ارادہ تھا کہ اس خالص سائنس کے بارے میں مکمل طور پر غلط تاثر دیا جا ، اور یہ میرے پاس واضح طور پر آگیا کہ اب وقت آگیا ہے کہ حکام کے پاس جاکر کرسچن سائنس اور اس کے علاج معالجے کے بارے میں سچائی بیان کی جا ئے، اور یہ ظلم و ستم رک گیا۔ میں جانتا تھا کہ یہ خدا کا کام ہے ، اور کوئی انسانی قانون اس میں مداخلت نہیں کرسکتا ہے۔ میں نے ڈریسڈن کے ایک طالب علم ، بیرونس اولگا وان بیس وٹز کو اپنے ساتھ آنے کے لئے ٹیلی گراف کیا ، اور میں نے ایک امریکی شہری کی حیثیت سے تعارف کروانے کے لئے ، ریاستہائے متحدہ امریکہ کے قونصل جنرل سے تعارف کا خط حاصل کیا ، اور ہم ایک ساتھ مل کر صدر کے پاس گئے۔ پولیس ، جو شہنشاہ کابینہ کا ممبر تھا۔

وہ اس وقت تک نہایت ہی احسان مند تھے جب تک کہ وہ یہ نہ سیکھیں کہ ہم کون ہیں اور پھر اس نے ہمارے ساتھ انتہائی حقارت کا سلوک کیا ، حالانکہ وہ جو کچھ کہنا چاہتا ہے اسے سننے سے انکار نہیں کرسکتا تھا۔ میں نے اسے بتایا کہ میں وہاں موجود ہوں اسے بتانے کے لئے کہ کرسچن سائنس کیا ہے اور اسے مطمئن کرنا کہ ہم قانون کی پاسداری کرتے ہیں۔ میں نے بیان کیا کہ یہ مسیح یسوع کا مذہب تھا۔ مارٹن لوتھر نے دعا کے ذریعہ بیماروں کو شفا بخش دی۔ اور اسے بتایا کہ میری بیکر ایڈی نے روحانی تندرستی کا سائنسی طریقہ دریافت کرلیا ہے ، اور یہ کہ اس کے شاگردوں کی حیثیت سے ہم بیماروں کی تندرستی اور انجیل کی تبلیغ کے لئے ماسٹر کے حکم کی تعمیل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ بیرونس وان بیس وِٹز نے اسے زندگی سے دوچار بیماریوں سے شفا بخش ہونے کا اپنا تجربہ بتایا جس کے بارے میں کہا جاتا تھا کہ یہ ایک لاعلاج بیماری ہے ، اور یہ کہ ہم بہت سارے جرمن لوگوں کی صحتیاب کرنے میں کیا کر رہے ہیں۔

جب ہم نے کافی حد تک اپنی حیثیت کی وضاحت کی ، تو میں نے اس سے پوچھا کہ کیا ہم جرمنی کے قوانین کے برخلاف کچھ کر رہے ہیں ، اور کہا کہ اگر ہم ہوتے تو ہم فوراًہی ختم ہوجائیں گے ، کیوں کہ ہم ہر چیز سے بالاتر ہیں جو قانون کی پاسداری کرتے ہیں۔ وہ بہت مشتعل دکھائی دے رہا تھا ، اور اس نے ایک کتاب اٹھائی جس کو اس نے میرے چہرے پر لرزتے ہوئے کہا ، ’’یہ جرمنی کا مجرمانہ ضابطہ ہے ، اور اس میں کوئی لکیر نہیں ہے جو کسی کو بھی اپنے طریقے سے خدا کی عبادت کرنے سے منع کرتا ہے۔‘‘

میں نے اس کا شکریہ ادا کیا اور کہا ، ’’ہیرو صدر ، بس اتنا ہی میں جاننا چاہتا ہوں ، اور اب آپ کے پاس بتانے کے لئے میرے پاس ایک اور چیز ہے ، اور وہ میں مجرم نہیں ہوں ، بلکہ ریاستہائے متحدہ امریکہ کا شہری ہوں ، اور میں توقع کروں گا کہ آئندہ بھی ایسا سلوک کیا جائے گا۔‘‘ اس سے یہ انٹرویو بند ہوگیا ، اور چونکہ اس نے اعتراف کیا تھا کہ ہمارے چرچ یا شفا یابی کے کاموں سے منع کرنے میں کوئی قانون موجود نہیں تھا ، لہذا پولیس کو فوری طور پر کالعدم قرار دے دیا گیا تھا ، اور ہمیں اس سلسلے میں مزید پریشانی نہیں ہوئی تھی۔

سیکھا گیا ایک بہت بڑا سبق پولیس صدر کے تجربے میں تھا۔ آٹھ مہینوں تک اس کے افسران نے بے رحمی کے ساتھ ہمارا پیچھا کیا اور ہمارے کام کو کچلنے کی کوشش کی ، لیکن جب اسے اطلاع ملی کہ میں ریاستہائے متحدہ امریکہ کا شہری ہوں اور قانون کا پابند ہوں تو اس نے میری آزادی کو پہچان لیا اور مجھے دھمکانے کی کوشش کرنے سے باز آ گیا۔ حکومت کا کام اپنے شہریوں کی حفاظت کرنا ہے ، اور جب تک وہ اپنی شہریت کے ساتھ وفادار رہیں ، وہ ان کو ناکام نہیں کرسکتی۔ مسز ایڈی نے متفرق تحریروں (صفحہ 185) میں لکھا ہے ،’’خدا کے فرد کی حیثیت سے اس (انسان) کی روحانی شناخت کا اعتراف اور کامیابی ، سائنس ہے جو آسمان کے نہایت سیلاب کے دروازوں کو کھول دیتی ہے۔‘‘ خدا کے ساتھ انسان کے بیٹے کا اعتراف اور اس رشتے کو تسلیم کرنا اس بیٹے کا حصول ہے ، کیونکہ انسان ہمیشہ باپ کے ساتھ ایک رہتا ہے۔ ریاستہائے متحدہ امریکہ میں میری شہریت کا اعتراف حکومت اور اس کے قوانین کے تحفظ کا حصول تھا۔ کسی ذاتی التجا اور مداخلت کی ضرورت نہیں تھی ، کیونکہ قانون ہمیشہ نافذ ہوتا ہے۔

ہم خدا کی حکومت کے شہری ہیں ، اور اگر ہم اس کو تسلیم کرتے ہیں اور کسی اور طاقت کی تجویز کو ماننے سے انکار کرتے ہیں تو ، ہم کائنات پر حکمرانی کرنے والے اور کوئی مخالف قوت نہیں جاننے والے خدائی قانون ، اس قانون کے تحفظ میں ہمیشہ کے لئے محفوظ رہیں گے۔ ایک مسیحی سائنس دان خدا کے ساتھ اس کے حقیقی تعلق کو قبول کرنے اور خدائی محبت کے دائرے میں اس کی شہریت کے تناسب سے ہر طرح کے غلطیوں سے نجات دلاتا ہے۔

ظلم و ستم کے ان مہینوں کے دوران ہر کیس ٹھیک ہو گیا تھا۔

اس وقت کے دوران ڈریسڈن میں یہ کام مستقل طور پر آگے بڑھ رہا تھا ، اور فروری 1900 میں ، وہ کمرہ جو عبادات کے لئے استعمال ہوا تھا وہ بہت کم معلوم ہوا ، اور کارکنوں نے ایک اپارٹمنٹ حاصل کیا جس کا مقصد کاروباری مقاصد کے لئے بنایا گیا تھا ، اور تھا دیواریں نکالی گئیں ، انھیں چرچ کا ایک بہت بڑا کمرے دیا گیا اور کلرک کے دفتر اور کتابیں فروخت ہونے پر دو چھوٹے کمرے چھوڑے گئے۔ انہوں نے ریڈنگ روم کے لئے چرچ کے کمرے کا بھی استعمال کیا۔ انھوں نے 17 فروری ، 1900 کو ان نئے حلقوں میں پہلی خدمت انجام دی اور اگلے دن جرمنی کے مسیح ، سائنس دان ، ڈریسڈن ، جرمنی میں فرسٹ چرچ آف مسیح سے باضابطہ طور پر ملاقات کی۔

ڈریسڈن طلباء نے مجھے اس موقع پر ان کے ساتھ رہنے کی دعوت دی ، اور میں نے اس خوشی سے خوشی سے فائدہ اٹھایا۔ برلن میں کام کرنے میں دلچسپی لینے والے متعدد افراد ، نے بھی اس خوشی کے موقع پر موجود ہونے کی خواہش ظاہر کی تھی ، لہذا جرمنی میں کرسچن سائنس کی پہلی تنظیم ، اس کی افتتاحی خدمت میں ہم میں سے اٹھارہ موجود تھے۔ یہ ایک تاریخی موقع تھا ، اور ہم نے جو اس خدمت میں حاضر ہونے کا اعزاز حاصل کیا تھا ، اور جب چرچ کا اہتمام کیا گیا تھا ، اجلاس میں موجود تھے ، نے تسلیم کیا کہ جرمن قوم کی خود مختار ذاتی حکومت سے آزادی کی طرف پہلا قدم تھا جو محدود ہوجائے گا مذہبی آزادی.

جیسا کہ میں یہ لکھتا ہوں ، تیس سال بعد ، جرمنی ایک جمہوریہ ہے اور مذہبی آزادی ریاستی قانون ہے۔

20 اکتوبر ، 1900 کو ، جب میں نے برلن میں کام شروع کیا اس کے صرف ایک سال بعد ، ہم نے جرمنی کے قوانین کے تحت فرسٹ چرچ آف مسیح ، سائنس دان ، برلن ، جرمنی کا انتظام کیا۔ محکمہ پولیس نے ہمارے ساتھ بڑے شائستہ سلوک کے ساتھ سلوک کیا۔ انہوں نے فائل پر رکھنے کے لئے ہمارے ضوابط ، مسلک وغیرہ کی ایک کاپی طلب کی۔ میں نے انہیں مدر چرچ کے ٹیینٹس کے ساتھ ایک چھپی ہوئی پرچی بھیجی جس میں بتایا گیا کہ یہ اس چرچ کی ایک شاخ ہے ، لہذا ہمارے طبقات نے سلطنت کے سرکاری ریکارڈوں کا ایک حصہ تشکیل دیا۔ ہم نے گیارہ ممبروں کے ساتھ آغاز کیا ، اور اگلے جون میں اپنی سیمی نیشنل کمیونین سروس میں ہم نے مزید گیارہ کا اضافہ کیا ، اور مجموعی طور پر بائیس بیس بن گئے۔ ہمارے پاس ہفتے میں چار عبادات تھیں ، دو جرمن اور دو انگریزی ، اور ایک سنڈے اسکول۔ ہماری انگریزی جماعت کی اوسط تقریبا پچاس ہے۔ اتوار کے روز جرمنی کی جماعت کی اوسط اوسطا پینتیس اور ہفتہ کے دن کے اجلاسوں میں ایک سو پچیس سے ایک سو پچاس تک تھی۔ ہمارے پاس سنڈے اسکول تھا جو آٹھ بچوں سے شروع ہوا تھا اور جو اب سیکڑوں میں بڑھ گیا ہے۔ کام کا ہر شعبہ فعال اور خوش کن تھا۔

جرمنوں کے لئے اپنے سرکاری چرچ سے رہائی حاصل کرنا مشکل تھا ، لہذا ان کا مظاہرہ اتنا آسان نہیں تھا جیسا کہ ان ممالک میں تھا جو چرچ اور ریاست الگ الگ تھے اور مذہبی آزادی ایک حقیقت تھی۔ ایک جرمن جو ریاستی چرچ سے دستبردار ہوا ہے ، قوانین کے مطابق ، وہ کسی قانونی معاہدے پر دستخط نہیں کرسکتا ہے۔ اس کے باوجود ، اور زبان میں دشواری کے باوجود ، ہم نے پہلے ہی سال میں کتابیں کی ایک اچھی خاصی تعداد میں فروخت کی۔ ہمارے لیڈر ، میری بیکر ایڈی کی دوسری کتابیں تناسب سے۔

جب یہ مشق بڑھتی گئی تو ، متلاشیوں کی تعداد میں اضافہ ہوتا گیا اور انہیں کتاب پڑھنے کی تعلیم دینے کا ایک اور جامع طریقہ استعمال کرنا پڑا۔ جرمن چھوٹے چھوٹے گروہوں میں تقسیم تھے۔ انگریزی جاننے والے کرسچن سائنس کے طلباء پر ایک گروپ کا چارج ہوتا تھا ، وہ ہفتے میں ایک یا دو بار ان سے ملتے تھے اور اسی طرح ان کی کوچنگ کرتے تھے جس طرح ہم اجلاسوں میں شروع میں استعمال کرتے تھے۔

اس میدان میں کام کرنے والوں کو ان کی زبان سے محبت اور تقدیس کی ضرورت تھی جنہوں نے اپنی زبان میں کرسچن سائنس کو پایا تھا اور ان میں سے کسی کو بھی پورا نہیں ہونا پڑا تھا۔ اس میں بہت سے لوگوں کو شفا یابی کا کام کرنا تھا ، اور ہر ایک جس نے حق کا اناج حاصل کیا تھا اس کو اس سرگرمی میں شامل کیا گیا۔

میں طلباء کے معاملات ٹھیک کرنے کو دیتا ، اور وہ میرے پاس کوئ سوال یا دشواری لے کر آجاتے۔ اور جیسے جیسے ان کی سمجھ میں اضافہ ہوا ، نئے کارکنان اپنی سرگرمیوں میں رہنمائی کے لئے ان کی طرف رجوع کریں گے۔ ایسا لگتا تھا کہ طلبہ کارکنوں کی تعداد سے کہیں زیادہ تیزی سے بڑھتا ہے ، اور ہر ایک کے لئے خدا کی خدمت میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینا ضروری تھا۔

سب کو ہدایت دی گئی تھی کہ مسیح یسوع اور مسز ایڈی نے پیدا ہونے والے ہر سوال کا جواب دیا ہے ، اور اگر وہ دعا کے ساتھ اپنی کتابوں کی طرف رجوع کریں گے تو ، ہر مسئلہ حل ہوجائے گا۔ کہ انہیں ہمیشہ یہ جان لینا چاہئے کہ مسیح یسوع میں جو ذہن تھا وہ ان کا دماغ تھا اور عظیم طبیب تھا۔ کہ خوف یا خودداری کی کوئی دلیل ان کی سرگرمی اور اس کے فائدہ مند نتائج میں رکاوٹ نہیں بن سکتی ہے۔ سب کو اتنا یقین تھا کہ خدا نے ہمیں یہ کام کرنے کے لئے مقرر کیا ہے ، اور ہمارے ساتھ کام کر رہے ہیں ، کہ کوئی خوفزدہ نہیں ہوا۔

نو عمر کارکنوں نے آسان کیسوں کو لیا اور کافی شفا بخش کی ، جبکہ زیادہ مشکل معاملات میرے پاس رہ گئے۔ میں ، بھی ، ایک نوجوان کارکن تھا ، کیونکہ میں کرسچن سائنس کو اس عرصے میں صرف تین یا چار سال جانتا تھا ، لہذا اس میں کوئی سوال نہیں ہوسکتا ہے کہ مسیح نے یہ کام کیا۔ انسانی کارکن صرف محبت اور اطاعت سے لیس تھے۔ جب وقت گزرتا گیا اور ابتدائی طلبہ نے تجربہ حاصل کیا تو ، انھوں نے تپ دق ، کینسر ، اندھا پن ، وغیرہ جیسے نام نہاد جان لیوا معاملات بھی لائے اور سب ٹھیک ہو گئے۔ کوئی ناکامی نہیں ہوئی تھی۔

شفا یابی کے کام کے علاوہ ، غیر حاضر مریضوں کے لئے بہت سارے خطوط لکھے جانے تھے ، اور چونکہ ان کے پاس کتابیں نہیں تھیں ، انھوں نے جتنا بھی سائنس سیکھا وہ ترجمہ شدہ لفظ میں لکھنا پڑا۔ میں شام کے اوقات پہلے ہی شاذ و نادر ہی سونا تھا ، اور یہ طلوع آفتاب کے لئے کبھی بھی میرے ڈیسک پر مجھے ڈھونڈنا معمولی بات نہیں تھی۔

اس دوران ڈریسڈن میں کام بڑھتا گیا اور مضبوط ہوا۔ ڈریسڈن پولیس نے برلن کے لوگوں کے ساتھ بھی ایسی ہی حیثیت اختیار کی۔ انہوں نے عبادات میں شرکت کی اور کارکنوں کو دیکھا ، لیکن چونکہ ان کے پاس شہنشاہ واپس نہیں تھا ، وہ سرگرمیوں میں اتنے مضبوط نہیں تھے ، اور چرچ کی عبادات باقاعدگی سے منعقد کی جاتی تھیں۔ متعدد معاملات نے صحتیابی کے لئے زیادہ سے زیادہ لوگوں کو چرچ میں لایا ، اور زیادہ سے زیادہ متلاشی افراد۔ برلن میں پڑھائی جانے والی ہر کلاس میں ڈریسڈن کے متعدد طلبا تھے۔ میں اکثر اس فیلڈ میں موجود کارکنوں سے ملنے گیا اور ان کی مدد کے طور پر ان کی مدد اور حوصلہ افزائی کی۔ میں اپنے مریضوں کو صبح گھر گھر دیکھتا ، ایک بجے کی ٹرین لے کر ڈریسڈن کو بیس بیس پر پہنچتا ، وہاں اپنے مریضوں اور طلباء سے ملتا ، اور سات بجے واپس آتا ، شام کے دس بجے اپنے گھر پہنچ جاتا ، جب میں چاہتا تھا میرے غیر حاضر کام کو رات تک جاری رکھیں۔

اس عرصے میں مدر چرچ کے دستی میں سالانہ تین کلاسز مہیا کیے جاتے تھے ، اور جب کہ وہ بہت چھوٹے تھے تو ، شروع میں صرف چار یا پانچ طلباء تھے ، وہ ورکرز کو تیار کرنے میں بہت مددگار ثابت ہوئے تھے۔ درس بہت ہی آسان تھا اور تیس سال بعد کلاسز کے ذریعہ طلباء کو لیا جاتا تھا۔

چونکہ ایسوسی ایشن کے اجلاس ہر مہینے ہوتے تھے ، اساتذہ طلباء سے قریبی رابطے میں رکھنے اور غلط فہمیوں کے خلاف احتیاط سے نگرانی کرنے میں کامیاب تھا۔ ہم نے ایک ساتھ کام کرنے اور سمجھنے میں اضافہ کیا ، ہمیشہ ہماری پیاری والدہ اور رہنما ، میری بیکر ایڈی ، خدا کے میسنجر کی تعلیم اور مثال سے ان کی رہنمائی اور حوصلہ افزائی کی۔

محنت کش لوگوں کے مفاد کے لئے انشورنس ایکٹ کی وجہ سے ، ہر وہ فرد جس نے اجرت کھینچی ، خواہ وہ فرشیں صاف کرنے والی عورت تھی ، جوتوں کو سنوارنے والی ایک شخص ، امپیریل بینک کی صدر ، یا حکومت کا ایک عہدیدار ، مجبور تھا کسی معالج سے معائنہ کرو کہ وہ ٹھیک نہیں ہے ، اور اپنا کام چھوڑنے سے پہلے ڈاکٹر کا سرٹیفکیٹ حاصل کرلیتا ہے۔ اور اپنی سرگرمیاں دوبارہ شروع کرنے سے پہلے ہی اس کی دوبارہ جانچ پڑتال کرنی ہوگی اور اس سے سرجری کا سرٹیفکیٹ ملنا چاہئے۔

ان شرائط کے تحت کام کا آغاز کرتے ہوئے ، ہمیں معالجین یا ان کی پیشرفت سے کسی قسم کا خوف نہیں تھا۔ انھوں نے اکثر اعلان کیا کہ یہ ایک کیس مہلک ہوگا ، لیکن جب ہم خدا کا قانون نافذ کرتے ہیں تو ہم اسے فوری طور پر ٹھیک ہوتے دیکھیں گے۔ لہذا ہم طبی سوچ کے ذریعہ طاقت کے کسی بھی خوف سے کام نہیں لیا۔

ہمارے پیارے لوگ اس مشکل وقت میں بہادر اور وفادار رہے تھے۔ ظلم و ستم کے اس دور میں ہم ان درجن سے زیادہ افراد سے محروم نہیں ہوئے جو عبادات میں شریک تھے ، اور کسی بھی طالب علم نے اعتماد نہیں کھویا۔ یہ چل رہا تھا جبکہ یہ بہت کوشش کر رہا تھا؛ کاغذات میں اکثر ایسے مضامین لائے جاتے تھے جن سے مجھے پکڑ لیا جاتا تھا ، اور یہ اعلان کیا جاتا تھا کہ میں صرف ایک امریکی غنڈہ گر ہوں ، اور جرمن عوام کو دھکیلنے کی کوشش کر رہا ہوں۔

ظلم و ستم کے اس دور کے دوران ، جب بھی مریض اپنے بستر تک محدود رہتا ، جاسوسوں کو اس معاملے کو دیکھنے کے لئے گھر میں رکھا جاتا تھا ، اس امید کے ساتھ کہ کوئی ہلاک ہوسکتا ہے اور مجھے اس کے بعد گرفتار کیا جاسکتا ہے اور کسی مجرمانہ الزام پر اس سے نمٹا جاسکتا ہے ، لیکن ہر مریض ان آٹھ مہینوں کے دوران چنگا ہوا تھا۔

ایک مثال میں ایک عورت کو بتایا گیا کہ اس کی واحد امید سرجیکل آپریشن ہے ، جس کے بغیر وہ چوبیس گھنٹے نہیں جی سکتا۔ وہ شفا یابی کے متعدد معاملات کے بارے میں جانتی تھی اور اس نے اپنے شوہر کو میرے لئے بھیجا ، یہ اعلان کرتے ہوئے کہ اس کے پاس مسیح کے سوا کوئی معالج نہیں ہوگا ، اور میں یہ کلمہ لاؤں اور اسے شفا بخشوں۔ خوف و ہراس میں اس نے معالج سے کہا کہ اس کا آپریشن نہیں ہوگا ، اور میں کرسچن سائنس میں اس کو ٹھیک کرنے کی کوشش کروں گا۔

ڈاکٹر نے فورا. ہی پولیس کو اطلاع دی ، اور انہوں نے جاسوس کو گھر میں رہنے کے لئے بھیجا جب تک کہ آخر نہ آئے۔ وہ کچھ ہی دنوں میں صحت یاب ہوگئی ، اور جاسوس جس نے اس کیس کو دیکھا تھا وہ سرکاری نگرانی واپس لینے کے بعد ہی عبادات پر آگیا۔

پولیس مداخلت کے خاتمے کے بعد ایک سال کے اندر ، جاسوس فورس کے متعدد افراد کرسچن سائنس کے متولی طلباء بن گئے ، اور ان کی اہلیہ اور کنبہ کے ساتھ عبادات میں شریک ہوئے۔

ان واقعات کے وقت جرمنی کا ایک قانون تھا جس میں یہ شرط فراہم کی گئی تھی کہ کسی بھی غیر ملکی کو بغیر کسی وجہ کے تین دن کے نوٹس پر ملک سے باہر بھیجا جاسکتا ہے۔ اگر اس شخص نے رخصت ہونے کی وجہ جاننے کی خواہش کی تو وہ اپنی حکومت سے کی گئی تفتیش کے ذریعہ ہی اسے سیکھ سکتا ہے۔ بہت سارے لوگ جو یہ جانتے تھے حیران ہوئے کہ انہوں نے مجھ سے چھٹکارا پانے کے لئے اس قانون سے فائدہ نہیں اٹھایا۔ اس کی ایک اور وجہ بھی ہوسکتی ہے: یعنی ، خدا نے مجھے وہاں بھیجا تھا ، اور مجھے سنبھال لیا اور مجھے وہاں رکھے یہاں تک کہ جب تک میں نے اس کام کو ختم نہ کیا جب تک اس نے مجھے یہ کام نہیں دیا تھا۔

اس تجربے نے ہمیں انمول اسباق لایا۔ ہم نے ہر وقت خدا پر انحصار کرنا سیکھا ، کیوں کہ اس نے اپنی موجودگی کا پتہ چلادیا تھا ، اور ہم نے انسانی خواہش کے ذریعہ جھوٹی سوچ اور حکومت کی طاقت کا مظاہرہ کیا تھا۔

چھٹا باب

آزادی کے مظاہرے کو سامنے لانے کے بعد ، اور نئے چرچ کے کمرے میں عبادات کو مضبوطی سے قائم کرنے کے بعد ، میں نے محسوس کیا کہ اب وقت آگیا ہے کہ میرے پاس مدر چرچ تشریف لائیں اور وہاں سے اپنے پیاروں کو کچھ اچھی چیزیں دیں۔ ہم ، اور ان کے انعامات کے ساتھ ان کا اشتراک کریں۔ میں بوسٹن گیا ، اور امریکہ کے تمام حصوں اور انگلینڈ اور اسکاٹ لینڈ کے ہزاروں خوش نصیب مسیحی سائنسدانوں کے ساتھ ملایا ، اور مدر چرچ کی شاندار عبادات سے لطف اندوز ہوا۔ وہاں میں نے 1902 کے لئے ہمارے پیارے قائد کا پیغام سنا: "پیارے بھائیو ، ظلم و ستم کے وقت خدا کے اپنے لوگوں کے لئے محبت کا ایک اور سال ، کرسچن سائنس کی تاریخ کی علامت ہے۔ ۔۔۔

برائی ، اگرچہ زبردست سازش کے ساتھ مل کر ، خدا کی تسبیح کرنے کے لئے کی گئی ہے۔

یہ میرے عزیز رہنما کے دل سے میرے لئے براہ راست پیغام معلوم ہوا ، اور میں مطمئن تھا ، لیکن اس سے بڑی نعمت میرے لئے محفوظ ہے۔

جب میں کچھ دن بعد کونکورڈ گیا تو کسی نے مسز ایڈی کو اطلاع دی کہ میں اس شہر میں ہوں۔ اگلے دن وہ مجھ سے ملنے آئی۔ میں واقعتا. مغلوب تھا کیونکہ میں جانتا تھا کہ اس نے کئی سالوں میں ذاتی دورہ نہیں کیا تھا۔

اس نے مجھے بتایا کہ وہ ایک انتہائی اہم کام ، مدر چرچ کی حکومت کی تکمیل میں مصروف تھی ، اور اسے یہ اعلان کرنا ضروری ہوگیا ہے کہ اس گرمی کے دوران وہ کوئی زائرین نہیں وصول کرے گا ، لہذا وہ مجھے اس کے لئے مدعو نہیں کرسکتی ہے۔ گھر لیکن میرے پاس ضرور آنا چاہئے۔ جب میں نے اس سے پوچھا کہ وہ میرا اتنا احترام کیوں کرے تو اس نے جواب دیا ، ’’میں اپنے پیارے ہاتھوں کو اپنے ہاتھ میں لے کر ، اور تمہاری بہادر آنکھوں میں جھانک کر ، اور ’’شکریہ‘‘کہے بغیر آپ کو جانے نہیں دے سکتا تھا۔‘‘‘ جب میں نے کہا ، ’’ میرا شکریہ ، ماں کس لئے؟ ‘‘ اس نے جواب دیا ، ’’بہادر اور سچے ہونے کے لئے ، جر أت کے ساتھ غلطی کا سامنا کرنے اور سچائی کے ساتھ کھڑے ہونے کی وجہ سے۔‘‘ میں نہیں جانتا تھا کہ وہ جرمنی میں بہت سارے حالات جانتی ہے ، لیکن اس نے کہا ، ’’میں ہمیشہ جانتا ہوں کہ میرے بچے کیا کررہے ہیں ، اور سچائی کی ترقی اور فتح کا۔‘‘ اس نے ہماری فتح میں اپنی خوشی کی بات کی۔ انہوں نے کہا کہ ابتدائی مسیحیوں کے دنوں سے اس ظلم و ستم سے پہلے کچھ نہیں ہوا تھا اور خدا ایسی وفاداری کا بدلہ دے گا ، اور ہمت اور وفاداری کا مظاہرہ آنے والے سالوں میں بہت سوں کو مزید تقویت بخشے گا۔

جب میں نے اسے ایک عاجز کمرے کے بارے میں بتایا جس میں ہم اپنی عبادات انجام دے رہے ہیں ، اور ہمارے ایک حاضر ملازم نے بتایا کہ کمرے کے داخلے نے اسے غاروں کے داخلی دروازے کی یاد دلادی ہے جس میں ابتدائی مسیح ان کی عبادات انجام دیتے ہیں ، تو انہوں نے جواب دیا۔ پورے تجربے نے انہیں ان ابتدائی مسیحیوں کی یاد دلادی ، اور اس نے ان کارکنوں کو جو ان کے ساتھ کھڑے تھے مجھے ان کی محبت کا سلام بھیجا۔

ہمارے کام کی اس محبت انگیز اعتراف اور اس پر نرمی سے مجھے ناقابل بیان خوشی کے ساتھ اپنے جرمن گھر اور فیلڈ میں بھیج دیا۔ مجھے واقعی اسرائیل میں ایک ماں ملی تھی ، جو اپنے بچوں کی تکلیف جانتی تھی ، ان پر اور ان کے ساتھ دیکھتی تھی ، اور اس کی برکت سے اس کا بدلہ لیتی تھی۔ اس وقت سے وہ کام اور کارکنوں میں اپنی دلچسپی کا اظہار کرتی رہی ، اور بار بار ایسے پیغامات بھیجتے جس سے ہماری تقویت اور حوصلہ افزائی ہوتی ہے۔

تندرستی کے کام کی مانگ میں اضافہ ہوتا رہا۔ ہر سال نئے کارکنان سامنے لائے اور سبھی روحانی تفہیم اور تقدس کو بڑھا۔

کلاسیں بڑی تھیں ، طلبہ یورپ کے تمام حصوں سے آتے تھے ، جہاں کہیں بھی شفا یابی کا پتہ چل چکا تھا۔ سوئٹزرلینڈ ، ناروے ، سویڈن ، فن لینڈ ، اور روس سے۔ اور ان طلباء نے حق کو اپنے گھر پہنچایا ، اور وہاں پر یہ مظاہرہ کیا۔

میں نے صرف ان لوگوں کو پڑھایا جو انگریزی کی کافی حد تک انگریزی جانتے تھے ، صحیفوں کی کلید کے ساتھ سائنس اور صحت کو پڑھنے کے لئے ، اور مسز ایڈی کی دوسری کتابیں۔ لیکن کوئی انگریزی پڑھ سکتا ہے اور پھر بھی بولے ہوئے لفظ کو سمجھنے میں بہت مشکل محسوس کرتا ہے ، لہذا دونوں زبانوں میں اسباق دینا ضروری تھا۔ میں نے متناسب نوٹ بنائے اور انگلش میں سبق دیا ، پھر زبان سے واقف افراد کو وہاں سے جانے کی اجازت دی ، اور جرمن زبان میں اس طلباء کے لئے دہرایا جو ابھی تک بولے ہوئے لفظ سے واقف نہیں تھے۔

شروع میں مجھے پہلے کے طالب علموں میں سے ایک میرے ساتھ رہنا تھا اور اس تعلیم میں میری مدد کرنا تھی ، لیکن میں نے آہستہ آہستہ اسے تنہا کرنا سیکھا۔

اس طرح گزرے کئی خوش ، فعال سال۔ طلباء کے ذریعہ مختلف شہروں میں گرجا گھروں کا آغاز ہوا۔ ایک بار پھر ’’عقلمند آدمی‘‘ نے وہ ستارہ دیکھا جس نے مسیح کے آنے کا اعلان کیا تھا۔

1903 میں مسز ایڈی نے ہمیں جرمن ہیرالڈ دیا ، جو ماہانہ اشاعت انگریزی کرسچن سائنس جرنل سے ترجمہ پر مشتمل تھا۔ یہ ایک بہت بڑی مدد تھی۔ اس نے اپنے قارئین کو کرسچن سائنس کے بارے میں عمدہ مضامین اور شفا یابی کی بہت سی شہادتیں دیں۔ یہ جرمنی کا واحد مجاز ادب تھا۔ اس سے پہلے ہم نے ایک لیکچر کا ترجمہ کیا تھا ، اور ایک چھوٹا پرچہ ، سوالات کے جوابات ، ایڈورڈ اے کمبال کے ذریعہ ، پبلشنگ سوسائٹی نے اس کی اجازت دے دی تھی۔

سن 1906 کے اختتام پر مجھے لگا کہ میرا کام مکمل ہوچکا ہے۔ میں کرسچن سائنس کو متعارف کرانے جرمنی گیا تھا ، اور اب یہ معروف اور مضبوطی سے قائم تھا۔ کارکنوں کو آزمایا گیا اور سچ تھا۔ وہ تجربہ کار اور وفادار اور عقلمند ثابت ہوئے تھے۔ وہ اپنے آبائی وطن میں ہمارے پیارے کاز کے کام کو آگے بڑھانے کے لئے تیار تھے۔ چنانچہ میں نے ان کو اپنے ساتھ چھوڑ دیا اور اپنے آبائی سرزمین ، وہ سرزمین جو کرسچن سائنس کی جائے پیدائش اور اس کے مبصر کے گھر تھا ، میں اپنے علاج اور تعلیم کا اپنا کام جاری رکھنے کے لئے امریکہ واپس آگیا۔

طلبا اپنے اعتماد کے وفادار تھے ، اور کام مستقل طور پر جاری ہے۔ ایک برلن فیلڈ سے متعین کرسچن سائنس کا پہلا جرمن استاد تھا۔ 1912 میں ان کی وفاداری عبادات کو جرمن زبان میں کلیدی کتاب کے عنوان سے درسی کتاب ، سائنس اینڈ ہیلتھ کی اشاعت سے نوازا گیا۔ اس سے کام کو زبردست حوصلہ ملا۔

کرسچن سائنس اور اس کا فائدہ مند کام اب پورے جرمنی میں شہروں ، چھوٹے گاؤں اور پہاڑی علاقوں میں مشہور ہے۔ اور جہاں بھی مسیح کی شفا یابی کے بارے میں جانا جاتا ہے ، وہاں مریم بیکر ایڈی کا نام سیکھنے والوں اور سادہ کسانوں کے ذریعہ پیار اور احترام کیا جاتا ہے۔ اس زمانے میں خدا کا انکشاف کرنے والا ، اور کرسچن تحریک کے قائد کی حیثیت سے ان کا مقام قبول کیا گیا ہے۔

سرسوں کے بیج کی اپنی مثال دیتے ہوئے ، مالک نے کہا: ’’جب یہ زمین میں بویا جاتا ہے (تویہ) زمین میں موجود تمام بیجوں سے کم ہوتا ہے۔ لیکن جب یہ بویا جاتا ہے تو وہ بڑا ہوتا ہے اور تمام جڑی بوٹیوں سے بڑا ہوتا ہے ، اور بڑی بڑی شاخیں نکالتا ہے۔ تاکہ ہوا کے پرندے اس کے سائے میں رہ سکیں‘‘؛ اور اس کو خدا کی بادشاہی سے تشبیہ دیتے ہیں۔

جب میں کرسچن سائنس کے عظیم کام کے بارے میں سوچتا ہوں تو اس کی تمثیل مجھے ہمیشہ یاد آتی ہے ، جس کی شاخیں پورے وسطی یورپ میں پھیل جاتی ہیں۔ سرسوں کا بیج جو اتنے بڑے درخت کی شکل اختیار کرچکا تھا وہ محبت کی فکر تھی جس نے 1896 میں دنیا بھر میں سفر کرنے والی اس عورت کو کرسچن سائنس کی درسی کتاب دینے کا اشارہ کیا۔ اس کتاب کا وصول کنندہ اس کے نتیجے میں ، انہوں نے اپنی الہی طبیعت کا مظاہرہ کرتے ہوئے ، کسی ایسے شخص کو تلاش کرنے کی کوشش کی جس نے ان عزیز لوگوں کے پاس جانے اور انھیں سچائی دینے کے لئے آزاد تھا۔ احسان کی یہ دو حرکتیں اپنے آپ میں چھوٹی معلوم ہوتی ہیں ، لیکن ان میں پیچھے الہی محبت کی سبقت تھی ، اور ان ہی سے جرمنی میں حقیقی ’’اصلاح‘‘ ہوئی ہے۔

’’وہ لوگ جو تاریکی میں چلتے تھے اْنہوں نے بڑی روشنی دیکھی ۔ جو موت کے سایہ کے ملک میں رہتے تھے اْن پر نور چمکا۔‘‘ (اشعیا 9: 2)۔